Download Urdu Font

What are Collections?

Collections function more or less like folders on your computer drive. They are usefull in keeping related data together and organised in a way that all the important and related stuff lives in one place. Whle you browse our website you can save articles, videos, audios, blogs etc and almost anything of your interest into Collections.
Text Search Searches only in translations and commentaries
Verse #

Working...

Close
Al-Tawbah Al-Tawbah
  • الشرح (The Expansion of Breast, Solace, Consolation, Relief)

    8 آیات | مکی
    سورہ کا عمود اور سابق سورہ سے تعلق

    یہ سورہ سابق سورہ کی مثنیٰ ہے۔ سورۂ ضحٰی کے بعد یہ بغیر کسی تمہید کے اس طرح شروع ہو گئی ہے گویا سابق سورہ میں جو مضمون ’اَلَمْ یَجِدْکَ یَتِیْمًا فَآوٰی‘ (الضحٰی ۹۳: ۶) اور اس کے بعد کی آیات میں بیان ہوا ہے اسی کی اس میں تکمیل کر دی گئی ہے۔ بس اتنا فرق نظر آتا ہے کہ سابق سورہ میں اللہ تعالیٰ نے اپنے جن الطاف و عنایات کو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تسلی کا ذریعہ بنایا ہے ان کا تعلق بعثت سے قبل یا ابتدائے بعثت کے دور سے ہے اور اس میں جن افضال و احسانات کا حوالہ دیا ہے وہ اس دور سے تعلق رکھتے ہیں جب آپ کی دعوت کا چرچا مکہ سے نکل کر عرب کے دوسرے گوشوں میں بھی پہنچ چکا ہے۔

    سابق سورہ میں آپ کو یہ بشارت دی گئی کہ دعوت کے پہلو سے آپ کا مستقبل آپ کے ماضی اور حاضر سے بہت بہتر ہو گا، آپ اس وقت جن مشکلات سے دوچار ہیں وہ قانون قدرت کے مطابق آپ کی تربیت کے لیے ہیں وہ جلد دور ہو جائیں گی۔ اس سورہ میں اس بشارت کی صداقت کے چند نمایاں شواہد کا حوالہ دے کر تاکید کے ساتھ آپ کو اطمینان دلایا گیا ہے کہ اللہ کی راہ میں آپ کو جو دشواری بھی پیش آئے گی اس کے پہلو بہ پہلو فیروز مندی بھی ہو گی بشرطیکہ آپ عزم و جزم کے ساتھ اس سے عہدہ برآ ہونے کا حوصلہ کریں۔

  • الشرح (The Expansion of Breast, Solace, Consolation, Relief)

    8 آیات | مکی
    الضحٰی - الم نشرح

    یہ دونوں سورتیں اپنے مضمون کے لحاظ سے توام ہیں۔اِن میں خطاب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ہے۔ قرآن کی ترتیب میں اِن کا یہ مقام بتاتا ہے کہ ام القریٰ مکہ میں آپ کی دعوت کا مرحلۂ انذار عام اِنھی دو سورتوں پر ختم ہوا ہے۔ یہی بات اِن کے مضمون سے بھی واضح ہوتی ہے۔

    دونوں سورتوں کا موضوع نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے تسلی اور آیندہ ایک بڑی کامیابی کی بشارت ہے۔

  • In the Name of Allah
  • Click verse to highight translation
    Chapter 094 Verse 001 Chapter 094 Verse 002 Chapter 094 Verse 003 Chapter 094 Verse 004
    Click translation to show/hide Commentary
    کیا ہم نے تمھارا سینہ تمھارے لیے کھول نہیں دیا؟
    یہ اُس معرفت و بصیرت کی تعبیر ہے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دین اور اُس کی دعوت کے باب میں خاص اپنے پروردگار کی طرف سے عطا ہوئی۔ وہ اعتماد و توکل جو آپ کی تمام قوت و عزم کا سرچشمہ تھا، آپ کے اندر اِسی سے پیدا ہوا۔ فرمایا ہے کہ ہم نے یہ خاص تمھارے لیے اور تمھاری تائید و نصرت کے لیے کیا تاکہ کوئی بڑی سے بڑی مزاحمت بھی تمھارے عزم و استقلال کو متزلزل نہ کر سکے۔
    اور تمھارا وہ بوجھ تم پر سے اتار نہیں دیا۔
    n/a
    جو تمھاری کمر توڑے دے رہا تھا؟
    یہ اور اِس کے بعد کا جملہ پہلے جملے پر عطف ہیں، اِس لیے ترجمہ اُسی کے لحاظ سے ہونا چاہیے۔ آیت میں جس بوجھ کا ذکر ہے، اِس سے مراد وہ بارغم ہے جو بعثت سے پہلے ہدایت کی راہ نہ پا کر اور بعثت کے بعد قوم کا رویہ دیکھ کر آپ اپنے اوپر محسوس کرتے تھے۔
    اور تمھاری خاطر تمھارا آوازہ بلند نہیں کر دیا؟
    یعنی تمھاری تقویت اور حوصلہ افزائی کے لیے۔ یہ اُس رفع ذکر کا بیان ہے ، جب آپ کی دعوت کا چرچا عرب کے اطراف و اکناف میں پھیل گیا۔ استاذ امام لکھتے ہیں: ’’...مکہ کے سادات جن کو نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سب سے پہلے دعوت دی، وہ تو ایک عرصے تک دعوت اور داعی کی مخالفت پر جمے رہے، لیکن حج کے موسم میں باہر کے جو لوگ آتے، اُن کے ذریعے سے یہ دعوت مکہ کے اطراف، خصوصیت کے ساتھ مدینہ کے انصار میں پھیل گئی۔ پھر بالتدریج نہ صرف عرب کے دور و قریب کے قبائل، بلکہ اطراف کے دوسرے ملکوں میں بھی اِس کا ذکر پہنچ گیا اور یہ اندازہ کرنا مشکل نہیں رہا کہ یہ آواز دبنے والی نہیں ہے، بلکہ جلد وہ وقت آنے والا ہے کہ بچے بچے کی زبان پر اِس کا چرچا ہو گا اور گوشہ گوشہ ’اَللّٰہُ اَکْبَر‘ کی صدا سے گونج اٹھے گا۔‘‘ (تدبر قرآن ۹/ ۴۲۷)  


  •  Collections Add/Remove Entry

    You must be registered member and logged-in to use Collections. What are "Collections"?



     Tags Add tags

    You are not authorized tag these entries.



     Comment or Share

    Join our Mailing List