Download Urdu Font

What are Collections?

Collections function more or less like folders on your computer drive. They are usefull in keeping related data together and organised in a way that all the important and related stuff lives in one place. Whle you browse our website you can save articles, videos, audios, blogs etc and almost anything of your interest into Collections.
Text Search Searches only in translations and commentaries
Verse #

Working...

Close
Al-Tawbah Al-Tawbah
  • الاعلی (The Most High, Glory To Your Lord In The Highest)

    19 آیات | مکی
    سورہ کا عمود اور سابق سورہ سے تعلق

    سابق سورہ ۔۔۔ الطارق ۔۔۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو تلقین صبر و انتظار پر ختم ہوئی ہے۔ آپ کو ہدایت فرمائی گئی ہے کہ جو لوگ تمہاری تکذیب پر اڑے ہوئے ہیں وہ اللہ تعالیٰ کے استدراج کے پھندے میں پھنس چکے ہیں، اب ان کے دن گنتی کے ہیں جو وہ پورے کر رہے ہیں۔ ان کو تھوڑی سی مہلت اور دو۔ ان کے طغیان کا انجام ان کے سامنے آیا ہی چاہتا ہے۔ اطمینان رکھو کہ یہ خدا کے قابو سے باہر نہیں جا سکتے۔ وہ ہر طرف سے ان کا احاطہ کیے ہوئے ہے۔

    اب اس سورہ میں قریش کے ہٹ دھرموں سے صرف نظر کر کے براہ راست نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے خطاب فرمایا ہے اور آپ کو یہ بشارت دی ہے کہ اللہ تعالیٰ کے ہر کام میں ایک ترتیب و تدریج ہے اور یہ ترتیب و تدریج تمام تر اس کی حکمت پر مبنی ہے تو اپنے رب پر بھروسہ رکھو۔ جلد وہ وقت آنے والا ہے کہ تمہاری سعی بامراد اور اللہ کی نعمت تم پر تمام ہو گی اور راہ کی ساری رکاوٹیں دور ہو جائیں گی۔ خطاب کی یہ تبدیلی آگے کی سورتوں میں (کم از کم دس سورتوں تک) نمایاں ہے۔ ان میں مخالفین سے کوئی بات کہی گئی ہے تو ضمناً۔ اصل خطاب نبی صلی اللہ علیہ وسلم ہی سے ہے اور مختلف اسلوبوں سے آپ کی وہ تمام الجھنیں دور فرمائی گئی ہیں جو دعوت کے اس مرحلے میں پیش آئیں یا جن کے پیش آنے کا امکان تھا۔

  • الاعلی (The Most High, Glory To Your Lord In The Highest)

    19 آیات | مکی
    الاعلٰی - الغاشیۃ

    یہ دونوں سورتیں اپنے مضمون کے لحاظ سے توام ہیں۔اِن میں خطاب نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے بھی ہے اور قریش کے سرداروں سے بھی، اور اِن کے مضمون سے واضح ہے کہ پچھلی سورتوں کی طرح یہ بھی ام القریٰ مکہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی دعوت کے مرحلۂ انذار عام میں نازل ہوئی ہیں۔

    دونوں سورتوں کا موضوع انذارقیامت ہے، لیکن دونوں میں اِس کے ساتھ داعی کے لیے تسلی اور مخاطبین کے رویے پر حسرت و افسوس کا مضمون بھی نمایاں ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو دونوں سورتوں میں اطمینان دلایا گیا ہے کہ تذکیر و نصیحت سے آگے آپ کی کوئی ذمہ داری نہیں ہے۔ اِس کے بعد یہ لوگوں کا کام ہے کہ نصیحت پائیں اور ہمارا کام ہے کہ اُن کی سرکشی پر اُن سے نمٹ لیں۔ آپ کو اِس معاملے میں کوئی تردد نہیں ہونا چاہیے۔

  • In the Name of Allah
  • Click verse to highight translation
    Chapter 087 Verse 001 Chapter 087 Verse 002 Chapter 087 Verse 003 Chapter 087 Verse 004 Chapter 087 Verse 005
    Click translation to show/hide Commentary
    اپنے پروردگار کے نام کی تسبیح کرو، (اے پیغمبر) جو سب سے برتر ہے۔
    لفظ ’تَسْبِیْح‘ میں تنزیہہ کا پہلو غالب ہے۔ مطلب یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کو اُن سب باتوں سے منزہ قرار دوجو اُس کے شایان شان نہیں ہیں اور اُس کی تنزیہہ کے اِس شعور کے ساتھ اُس کی یاد سے اپنے دل کو آباد اور اپنی زبان کو تررکھو، اِس لیے کہ راہ حق میں صبر و استقامت کا حصول اگر ہو سکتا ہے تو اِسی یاد سے ہو سکتا ہے۔
    جس نے بنایا، پھر نوک پلک سنوارے۔
    اِس سے آگے آیت ۵ تک اللہ تعالیٰ نے اپنا طریقہ بتایا ہے کہ اُس کے ہر کام میں ایک ترتیب و تدریج ہوتی ہے اور وہ اپنی حکمت کے تقاضے سے ہر چیز کو اِسی ترتیب و تدریج سے اُس کے اتمام تک پہنچاتا ہے۔
    جس نے (ہر چیز کے لیے) اندازہ ٹھیرایا، پھر (اُس کے مطابق) چلنے کی راہ دکھائی۔
    n/a
    جس نے سبزہ نکالا۔
    n/a
    پھر اُسے گھنا سرسبز و شاداب بنا دیا۔
    اصل میں ’غُثَآءً اَحْوٰی‘ کے الفاظ آئے ہیں۔ اِن کا جو ترجمہ ہم نے کیا ہے، اُس کے دلائل کی تفصیل کوئی شخص اگر چاہے تو امام حمید الدین فراہی کی کتاب ’’مفردات القرآن‘‘ اور استاذ امام امین احسن اصلاحی کی تفسیر ’’تدبرقرآن‘‘ میں دیکھ سکتا ہے۔


  •  Collections Add/Remove Entry

    You must be registered member and logged-in to use Collections. What are "Collections"?



     Tags Add tags

    You are not authorized tag these entries.



     Comment or Share

    Join our Mailing List