Download Urdu Font

What are Collections?

Collections function more or less like folders on your computer drive. They are usefull in keeping related data together and organised in a way that all the important and related stuff lives in one place. Whle you browse our website you can save articles, videos, audios, blogs etc and almost anything of your interest into Collections.

saving...

saving...

Loading...

نکاح کیا نہیں ہے؟ | اشراق
Font size +/-

نکاح کیا نہیں ہے؟


دورِ جدیدآزادی کا دور ہے۔ اس دور میں آزادی کی لہر مغرب سے اٹھی اور ہر نسل، رنگ اور تہذیب اور ان کی اقدار کو اپنی رو میں بہاکر لے گئی۔ اس بہاؤ کا شکار دیگر چیزوں کے ساتھ ساتھ عفت کی وہ قدر بھی ہوئی جو نکاح کی زنجیر سے مرد و عورت کو میاں بیوی کے مقدس اور پاکیزہ رشتے میں جوڑے رکھتی ہے۔
آج کی مغربی دنیا میں نکاح کوئی قانونی اور سماجی تقاضا نہیں ہے بلکہ اسے ثقافتی نوعیت کی ایک اضافی چیز سمجھا جاتاہے۔رہا مشرق تو اس میں نکاح کی زنجیرمغرب کی طرح ٹوٹی تو نہیں، مگر کمزور ضرور ہوگئی ہے۔ مسلم قوموں میں نکاح آج بھی ایک مطلوب شے ہے، لیکن میڈیا کی آزادروی اور نکاح کو مشکل بنادینے والے معاشی اور سماجی حالات کی بنا پر لوگ دوسرے راستے ڈھونڈنے لگے ہیں۔اس عمل میں نکاح کے نام پر بعض ایسے تعلق وجود میں آرہے ہیں جو رسمی طورپرنکاح اوراپنی حقیقی شکل میں بدکاری ہیں۔ ہمارے ملک پاکستان میں ا ن کا چلن عام نہیں لیکن عرب ممالک میں جہاں گرم آب و ہوا کے علاوہ دولت کی گرمی بھی عام ہے اور اس کے ساتھ مذہبی روایت کی پاسداری کا چلن بھی ابھی متروک نہیں ہوا، نکاح کی متعدد ایسی اقسام عام ہورہی ہیں۔ان میں دورانِ سفر کیا گیا نکاح، بیرونِ ملک قیام کے دوران میں کیا گیا نکاح،معاشرے کی نظر سے چھپ کر کیا گیا نکاح، کسی خاص مدت کے لیے کیا گیانکاح وغیرہ شامل ہیں۔بجاے اس کے کہ ہم فقہی انداز میں بحث کرکے نکاح کی ان اقسام میں پائی جانے والی غلطی بیان کریں، ہم یہ بتانا چاہتے ہیں کہ اصل نکاح اپنی روح کے اعتبار سے کیا ہوتا ہے۔
ہمارے ہا ں نکاح کے بارے میں یہ تصور رائج ہے کہ ایک مرد اور ایک عورت دو گواہوں کی موجودگی میں ایجاب و قبول کرلیں تو یہ نکاح کا عمل ہے۔یہ نکاح کا ایک فقہی تصور ہے۔ نکاح اپنی اصل کے اعتبار سے ایک مرد اور ایک عورت کے مستقل اور عَلانیہ رفاقت کے اس عہد کا نام ہے جس کا اظہار وہ معاشرے میں اپنے جاننے والوں کے حلقے میں کرتے ہیں۔یہاں مستقل تعلق کا مطلب دوامی تعلق نہیں۔ میاں بیوی جب چاہیں یہ رشتہ ختم کردیں۔مگر نکاح کرتے وقت اس تعلق کوکسی خاص مدت اور حالات کا پابند نہیں کیا جاسکتا بلکہ اسے مستقلاً ساتھ نبھانے کے عزم سے کیا جاتا ہے۔اس لیے اس میں میاں اوربیوی دونوں پر ایک دوسرے کے حوالے سے کچھ حقوق اور ذمہ داریاں عائد ہوجاتی ہیں۔یہ تعلق چونکہ عَلانیہ بھی ہوتا ہے اس لیے معاشرہ ان حقوق و فرائض کا ضامن ہوتا ہے اور ان دونوں میاں بیوی کو اپنے ایک بنیادی یونٹ یعنی خاندان اور اس تعلق سے پیدا ہونے والے بچوں کو ان کی اولاد کے طور پر بلا تردد قبول کرلیتا ہے۔
یہی نکاح ہے اور صرف یہی نکاح ہے۔قرآن اسی کو پاکدامنی، عصمت اور عفت سے تعبیرکرتاہے۔ اس کے علاوہ جو کچھ ہے وہ قرآن کے اپنے بیانات کے مطابق صرف دو صورتوں میں ظہور پذیر ہوسکتا ہے۔ایک ’’مسٰفحین‘‘اور دوسرا ’’متخذی اخدان‘‘ ہونا(مائدہ5:5)۔ پہلے کامطلب یہ ہے کہ انسان کا اصل مقصود صرف خواہشِ نفسانی کی امنڈتی موج کا نکاس ہے۔ یہ ظاہرہے کہ ایک عارضی عمل ہے۔اس کا مقصود میاں بیوی کے مستقل تعلق میں رہ کراپنی حفاظت کرنانہیں بلکہ جوانی کی مستی سے لطف اندوز ہونا ہے۔ہم نے اردو میں بڑے محتاط انداز میں قرآن کے مدعا کو بیان کیا ہے وگرنہ قرآن کے الفاظ تو بالکل واضح ہیں کہ یہ نکاس جذبات کا ایک عارضی عمل ہے، جس میں مستقل رفاقت کا کوئی شائبہ نہیں ہوتا۔
اس عمل کی سب سے عام شکل پیشہ ور عورتوں کے پاس جانا ہے۔مگر نکاح کے نام پر کیے جانے والے وہ تمام معاہدات جن میں مستقل رفاقت پیش نظر نہیں ہوتی بلکہ کسی خاص وقت یا حالات کی قید لگی ہوتی ہے اسی کے ذیل میں آتے ہیں۔ان میں اصل خرابی یہ ہوتی ہے کہ مستقل رفاقت نہ ہونے کی بنا پر میاں بیوی کی حیثیت میں جو حقوق و فرائض خود بخود عائد ہوجاتے ہیں وہ ایسے تعلقات میں زیر بحث نہیں آتے۔فریقین کی سیرت و عادات، اولاد اور اس کی تربیت، خاندان اور اس کی تشکیل ایسے تعلقات میں قابلِ ذکر چیزیں نہیں ہوتیں بلکہ اصل مسئلہ وقتی جذبات کی تسکین ہوتاہے۔اس کے بعد ایسے تعلقات کے جواز کا کوئی امکان نہیں رہ جاتا۔
مسٰفحینکے بعد دوسری چیز متخذی اخدان ہونا ہے۔ یہ وہ عمل ہے جس میں مرد اور عورت کے بیچ میں تعلق تو کچھ مستقل نوعیت ہی کا ہوتا ہے ، مگر یہ سب معاشرے کی نظر سے بچ کر چوری چھپے ہوتا ہے۔یاری آشنائی کا یہ تعلق اعلانِ عام کے اس وصف سے محروم ہوتاہے جو اس تعلق کو معاشرے کی طرف سے رشتے کی سندِ قبولیت عطا کرتا ہے ۔ نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ حقوق و فرائض پر کوئی توجہ دلانے والا رہتا ہے اور نہ خاندان کا وہ ادارہ وجود میں آتا ہے جو زمانے کے ہر سرد و گرم اور مزاجوں کے ہر اختلاف کے باوجود ممکنہ حد تک اپنا وجود برقرار رکھنے کی کوشش کرتا ہے۔ ایسا تعلق مزاجوں کے معمولی اختلاف، خوف و پریشانی اورزندگی کے کسی معمولی سے مسئلے کی مار بھی نہیں سہَ پاتا اور اپنے پیچھے بدنامی ، ناجائز اور لاوارث بچوں اوربے وفائی کا داغ لیے منتشر جذبات اور شکست خوردہ نفسیات پر مبنی شخصیات چھوڑ جاتا ہے۔
نکاح کیا ہوتا ہے، یہ بات دنیا ہمیشہ سے جانتی تھی۔نزولِ قرآن سے قبل بھی نکاح ہوتے تھے۔ نبوت سے قبل خود ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا نکاح حضرت خدیجہ رضی اللہ عنھا سے اسی طرح ہوا۔ اس لیے قرآن نے یہ نہیں بتایا کہ نکاح کیا ہوتا ہے۔ اس کا کمال یہ ہے کہ اس نے مسٰفحیناور متخذی اخدان کے الفاظ استعمال کرکے ہمیشہ کے لیے یہ بتادیا کہ نکاح کیا نہیں ہوتا۔اسی کی بنیاد پر زمانۂ جاہلیت میں رائج نکاح سے انحراف کی بعض صورتوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ممنوع قرار دیاتھا اوراسی کی روشنی میں آج ہم یہ فیصلہ کرسکتے ہیں کہ نکاح کے نام پر معاشرے میں جو کچھ سامنے آتاہے وہ درست ہے یا نہیں اورجو غلط ہے وہ کس بنیاد پر غلط ہے؟




 Collections Add/Remove Entry

You must be registered member and logged-in to use Collections. What are "Collections"?



 Tags Add tags

You are not logged in. Please login to add tags.


Join our Mailing List