Download Urdu Font

What are Collections?

Collections function more or less like folders on your computer drive. They are usefull in keeping related data together and organised in a way that all the important and related stuff lives in one place. Whle you browse our website you can save articles, videos, audios, blogs etc and almost anything of your interest into Collections.

saving...

saving...

Loading...

Sajid Hameed Profile

Sajid Hameed

  [email protected]
Author's Bio
Visit Profile
متن حدیث میں ہمارے تصرفات (۳) (2/2) | اشراق
Font size +/-

متن حدیث میں ہمارے تصرفات (۳) (2/2)

متن حدیث میں ہمارے تصرفات (۳) (1/2)

دوسری مثال

دوسری پیوند شدہ ۵؂ روایت یوں ہے:

عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ یُخْبِرُ عَنْ رَسُوْلِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ قَالَ: ’’الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالْبُرُّ بِالْبُرِّ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالتَّمْرُ بِالتَّمْرِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالشَّعِیْرُ بِالشَّعِیْرِ رِبًا إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ‘‘. (صحیح بخاری، رقم۲۱۳۴)

اس روایت میں چار چیزوں کو انھی چار چیزوں کے بدلے میں بیع سے منع کیا گیا ہے۔اگرالف لام کی رعایت کی جائے تو ان جملوں کا اردو میں ایک مفہوم یہ ممکن ہے:

’’...نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سونے کے بدلے میں اتنا ہی اور اسی جیسا سونا خریدا جائے تو یہ رِبا (سود) ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔گندم کے بدلے اسی قسم و معیار اور اسی مقدار کی گندم خریدو فروخت کی جائے تو اس میں ربا ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔ کھجور کے بدلے اس قسم ومعیارکی اور اتنی مقدار کی کھجور خریدو فروخت کی جائے تو اس میں ربا ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔ جو کے بدلے اسی قسم و معیاراور اتنی مقدار کے جوکی خریدو فروخت کی جائے تو اس میں ربا ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔‘‘

اس حدیث کے اس مفہوم میں نقدا نقد والے تمام جملے دو وجوہ سے بے محل ہیں: ایک اس وجہ سے کہ کون ہے جواِدھر آپ کو وہی چیز دے اور اسی وقت آپ سے ویسی ہی آپ کی چیز لے لے؟ یہ سودا نہیں کھیل ہوا۔ مثلاً کون ہے جو ایک کلو گرام باسمتی چاول دے کر اسی وقت ایک کلوگرام باسمتی چاول لے لے۔ ادھار میں تو ایسا ہو سکتا ہے، نقدًا کیسے ہوسکتا ہے؟ اس وضاحت سے آپ سمجھ سکتے ہیں کہ اس میں نقدا نقد (إلا ہاء وہاء) کا اضافہ بے محل ہے۔ یہ اضافہ سہواً ہوا ہوگا، یہ پیوند دوسری روایتوں کے متن کے باہم متشابہ ہونے کی وجہ سے ہوا، جس طرح ہم قرآن کی متشابہ آیات کو نماز میں گڈ مڈ کردیتے ہیں، اسی طرح حدیث کے متشابہ متون بھی باہم گڈمڈ ہو سکتے ہیں۔ مختصر یہ کہ یہاں پیوند لگا ہے، خواہ سہواً لگا ہو یا عمداً۔
میری بات کو سمجھنے کے لیے باسمتی چاول کی مثال پر دوبارہ غور کریں:

ایک کلو باسمتی چاول ایک کلو باسمتی چاول کے بدلے میں خریدنا سود ہے، لیکن اگر معاملہ نقداً ہو تو درست ہے۔

یعنی نقداً ایک کلو چاول دے کر ایک کلو چاول خرید لو یہ درست ہے، سوال یہ ہے کہ شرعاً تو یہ سودا درست ہے، مگریہ سودانقداً ہوتا کہاں پر ہے کہ ایک ہی چیز کا محض تبادلہ کرلیا جائے۔ دوسری وجہ یہ ہے۔ غور کیجیے کہ پہلا جملہ (خط کشیدہ) اگر ادھار بیع کے لیے ہے تو اس میں ربا (سود) کیسے ہوا؟ کیونکہ ادھار بیع میں سود تو ہوتا ہی تب ہے کہ جب واپسی کے وقت مقدار بڑھا دی جائے یا معیار۔ جب کہ یہ روایت کہہ رہی ہے کہ اتناہی اور ویسا ہی سونا ادھار بیچنا سود ہے، یعنی معیا ر اور مقدار میں کوئی اضافہ ہوا ہی نہیں، تب بھی سود ہے۔سود تو ہوتا ہی اضافہ ہے۔ اگر یہ جملہ نقد کے لیے ہے توعادتاً یا طبعاً نقد سودا یوں ہوتا ہی نہیں ہے کہ میں ایک کلو باسمتی چاول آپ کو دوں اورفوراً ویسے ہی ایک کلو باسمتی چاول آپ سے لے لوں۔
چنانچہ اس روایت کے الفاظ کسی رخ پر صحیح نہیں بیٹھتے، اس لیے کہ اس میں سہواً دوسری روایت سے پیوند لگا ہوا ہے۔ محدثین یا راویوں نے اسی طرح کے مضمون کی دوسری روایات سے یہ الفاظ یہاں درج کردیے ہیں۔شاید اس لیے کہ حضرتِ بلال والی مذکورہ بالا روایت کی نکالی ہوئی علت درست قرار پا جائے۔جن احادیث سے یہ الفاظ چنے گئے ہیں، ان کا حوالہ آگے آتا ہے۔ چونکہ ایسی بیع نقداً ہوتی ہی نہیں ہے، اس لیے یہاں نقد کی بات کرنا ہی بے محل ہے۔ اور اگر یہ اضافہ درست مانا جائے تو پہلے جملہ کا مطلب ادھار ہو گا اور ادھار میں ایک جیسی چیز دینے میں سود پیدا ہی نہیں ہوتا۔ اس طرح کے سودے ادھار میں روزانہ ہوسکتے ہیں۔ آج کوئی اپنی بیٹی کے لیے ۱۲ قیراط کا پانچ تولے سونا چھ ماہ کے لیے ادھار لے اور چھ ماہ بعد ۱۲قیراط کا پانچ تولے سوناہی واپس کردے تو شرعاً، عادتاً اور طبعاً نہایت صحیح معاملہ ہوگا۔لیکن اِدھر آدمی اپنا سونا دے اوراُدھر دوسرے کا اتنا ہی اور ویسا ہی سونا لے تو یہ سودا ناقابل فہم ہے۔
دوسرا مطلب الف لام کی تکرارکا لحاظ کیے بغیر یہ ہو سکتا ہے (کہ یہاں میں صرف سونے والا جملہ لے رہا ہوں تاکہ طوالت سے بچا جاسکے) ۔

اعلی معیار کا سونا گھٹیا سونے کے بدلے خریدا جائے تو یہ سود ہے، سوائے اس کے کہ معاملہ نقدا نقد ہو۔ یا
وزن میں زیادہ سونے کو کم سونے کے بدلے خریدنا سود ہے، سوائے اس کے کہ معاملہ نقدا نقد ہو۔

اس صورت میں بھی نقدا نقد والا جملہ بے محل ہو جاتا ہے ۔ اس جملہ کی وجہ سے پہلے جملے کا مفہوم یہ ہو گا کہ ان چیزوں کی ادھار بیع منع ہو گی۔یہ بات درست نہیں ہے، اس لیے کہ ہمیشہ ایسی ادھار بیع ربا کا باعث نہیں ہے۔مثلاً اگر ایک کلو باسمتی کے معاوضے میں دو کلو موٹے چاول بکتے ہوں، تو خواہ سودا ادھار بھی ہو درست ہے۔ مثلاً،اگر چھ ماہ بعد بھی اس کو دو کلو موٹے چاول ہی دیے جائیں تو اس میں سود نہیں ہو گا۔لہٰذا یہاں بھی یہ جملہ روایت کو بے معنی بنا رہا ہے۔
دوسرے یہ کہ چونکہ ایسے سودے نقد بھی صحیح ہیں اور ادھار بھی اس لیے اس میں بھی نقدا نقد کا اضافہ بے معنی ہے۔ یعنی میں ۱۲ قیراط کاچھ تولے سونا چھ ماہ کے لیے ادھار لوں اور چھ ماہ بعد ۲۴ قیراط اتنا ہی سونا واپس کروں تو اس صورت میں یقیناًاس میں سودپیدا ہوجاتا ہے۔لیکن اگر ۱۲ قیراط کے چھ تولے سونے سے ۲۴ قیراط کا تین تولے سونا بکتا ہو، اور میں چھ ماہ بعد ۲۴ قیراط کاتین تولے سونا واپس کروں تو اس میں نہ سود ہے اور نہ کوئی اور حرمت۔
تیسرے یہ کہ اگر بفرض محال یہ بات مان بھی لی جائے کہ یہ جملہ یوں ہی تھا، تو حضرت بلال والی روایت میں اور اس روایت میں تضاد پیدا ہو جائے گا۔ حضرت بلال والی وہ روایت جسے ہم نے پیوند شدہ قرار دیا ہے، یہ کہتی ہے کہ بڑھیا کھجور کے بدلے گھٹیا کھجور کا نقداً سودا نہیں ہو سکتا، اس لیے کہ اس میں سود ہے۔ جبکہ یہ روایت دوسرے مفہوم کے اعتبار سے یہ کہہ رہی ہے کہ ایسی بیع ہو سکتی ہے۔ لہٰذا ہر اعتبار سے یہ جملہ حدیث میں راویوں کا لگایا ہواپیوند ہے۔ اس پیوند نے ہماری شریعت میں ربا الفضل کے تصور کا اضافہ کیا ہے، جو صدیوں سے لاینحل چلا آرہا ہے۔ جس کا ایک حل استاذی الجلیل غامدی صاحب نے پیش کیا ہے ۔۶؂
اس میں اصل، یعنی بے پیوند متن اتنا ہی ہے جو بخاری میں ابو بکرہ رضی اللہ عنہ کی روایت میں آیا ہے:

قَالَ أَبُوْ بَکْرَۃَ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ: قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’لَا تَبِیْعُوا الذَّہَبَ بِالذَّہَبِ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ وَالْفِضَّۃَ بِالْفِضَّۃِ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ وَبِیْعُوا الذَّہَبَ بِالْفِضَّۃِ وَالْفِضَّۃَ بِالذَّہَبِ کَیْفَ شِئۡتُمْ‘‘.

’’یہ صحابی کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سونے کو سونے کے بدلے (ادھار) مت بیچو، سوائے یہ کہ وہ وزن ومعیار میں بالکل ویسا ہی ہو، اور نہ چاندی کے بدلے چاندی(ادھار) بیچو، الاّ یہ کہ وزن و معیار میں بالکل ایک جیسی ہو، البتہ سونے کے بدلے چاندی اور چاندی کے بدلے سونا جیسے چاہو بیچ سکتے ہو۔‘‘

اس روایت میں بھی آخری جملہ پیوند کامعلوم ہوتا ہے یا پھر یہ نامکمل ہے۔۷؂ بہرحال، روایت کا ابتدائی حصہ درست لگتا ہے۔ البتہ اس میں ’ادھار‘ کا لفظ محذوف ہے یا موقع محل میں واضح ہونے کی وجہ سے مقدر تھا۔ ترجمہ میں یہ مقدر کھول دیا گیا ہے۔اس مقدر کو اگر نہ کھولا جائے تو یہ روایت بھی اسی طرح بے معنی حکم پر مبنی ہو جائے گی۔اس متن کو دیکھ کر واضح ہوجاتا ہے کہ ’إلا سواء بسواء‘ نے مذکورہ بالا روایات میں ’إلا ہاء وہاء‘ کا روپ دھار لیا ہے۔ ذرا دونوں متون کا قریبی جائزہ لیں تو آپ کو واضح ہو گا کہ کس طرح متشابہ متن اس پیوند کا باعث بنا ہے:

پیوند شدہ متن

عَنْ رَسُوْلِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ قَالَ: ’’الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ...‘‘

پیوند سے محفوظ متن

قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’لَا تَبِیْعُوا الذَّہَبَ بِالذَّہَبِ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ...‘‘

ایک تیسرا مفہوم بھی ممکن ہے، لیکن اس میں بہت سی باتیں فرض کرنا پڑیں گی:

عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ یُخْبِرُ عَنْ رَسُوْلِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، قَالَ: ’’الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالْبُرُّ بِالْبُرِّ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالتَّمْرُ بِالتَّمْرِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالشَّعِیْرُ بِالشَّعِیْرِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ‘‘.(صحیح بخاری، رقم۲۱۳۴)
’’...نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سونے کے بدلے میں سونا خریدا جائے تواس میں سود کا امکان ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔گندم کے بدلے گندم خریدو فروخت کی جائے تو اس میں ربا ہو سکتا ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔ کھجور کے بدلے کھجور خریدو فروخت کی جائے تو اس میں ربا کا امکان ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔ جو کے بدلے جوکی خریدو فروخت کی جائے تو اس میں سود ہو سکتاہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد معاملہ ہو۔‘‘

اس میں جو چیزیں فرض کرنا ہوں گی، اس میں ایک تو لسانی اصول ہے کہ اسمیہ جملہ کو خبر کے بجاے امکانِ خبر پر محمول کیا جائے۔ دوسرے یہ کہ ان چاروں چیزوں کو باقی تمام اجناس سے ممتاز مانا جائے۔ ممتاز ماننے کا ایک پہلو یہ کہ تبادلے کی بیع (barter system) کے زمانے میں ان کو نقدی (currency) کی حیثیت حاصل ہو، سونے کے ساتھ ان کا جمع کرنا اس کا قرینہ ہے۔یعنی وہ چیزیں جن کو تبادلہ میں معیار کی حیثیت حاصل ہو جاتی ہے ۔نقدی کی حیثیت پانے والی اشیا کی قیمت میں افراط وتفریط غیر فطری عوامل سے ہو سکتاہے۔ضروری نہیں کہ وہ مارکیٹ کے عام بہاؤ سے افراط وتفریط سے گزریں۔ یعنی انھیں مصنوعی طریقے سے بھی اس اتارچڑھاؤ میں رکھا جاسکتا ہے۔ دوسرے یہ کہ ان میں تین چیزوں کا تعلق خوراک سے بھی ہے ۔ یہ بنیادی ضرورت کی چیزہے۔ ذخیرہ اندوزی سے ان چیزوں کی مصنوعی کمی پیدا کی جاتی ہے تاکہ ان کی قیمت بڑھ جائے اور منافع کمایا جائے یا دوسری چیزوں کی قیمت بڑھانے کے لیے ان کی فروانی کردی جاتی ہے وغیرہ۔ مثلاً آج جو کی بوری ایک درہم میں آتی ہے۔ بیوپاری باہمی ساز باز سے جو کی مارکیٹ میں کمی پیدا کردیں، جس سے جو کی قیمت بڑھ جائے۔ چنانچہ قرض دارجب جو واپس کرنے آئیں گے تو وہ مہنگے جو واپس کریں گے، جن کی تازہ قیمت دو درہم فی بوری ہو چکی ہے ۔اس مہنگے جو سے مہاجن دوسری چیزوں کی زیادہ مقدار خرید سکیں گے۔مثلاً چند ماہ پہلے وہ ایک بوری دے کر ایک درہم سونا خرید سکتے تھے، اب وہ دو درہم خرید سکتے ہیں۔ یوں مصنوعی طریقے سے پوری مارکیٹ میں ایک سودی عمل وجود پذیر کیا جاسکتا ہے کہ کل کے سستے جو کے مقابلے میں آج کے مہنگے جو واپس لیے گئے، حالاں کہ مقدار بھی وہی تھی، اور معیار بھی وہی۔ یوں مہاجن چکر دے کر سود کمانے لگ گیا ہوگا۔
ہمارے ملک میں کارفرما عناصر پچھلی چند دہائیوں سے زمین اور روپے کے ساتھ ایسا ہی کررہے ہیں۔ یہ ممکن ہے کہ آپ نے اپنے دور میں اس طرح کی سرگرمیوں کے سدباب کے لیے یہ حکم دیا ہو، کہ ان چار چیزوں کی ادھار بیع نہیں ہو گی تاکہ مہاجن قسم کے لوگ سود کی حرمت کے بعد اس طرح جعل سازی سے سود نہ کمانے لگ جائیں۔ اس صورت میں یہ شرعی حکم کے بجاے محض ایک وقتی حل ہوگا، جیسے کوئی آرڈیننس ہو، کہ آج سے ان چار چیزوں کا انھی چار چیزوں کے بدلے ادھار سودا نہیں ہوگا۔ اگر ہوگا تو نقداً ہی ہوگا۔ اس صورت میں ان سب چیزوں کا الف لام جنس کا ماننا ہو گا۔ یعنی سونے کے بدلے سونا نہیں بیچا جائے گا، جو کے بدلے جو، گندم کے بدلے گندم سب کے ادھار بیچنے پر پابندی ہو گی، خواہ یہ چیزیں ایک ہی قسم کی ہوں یا مختلف ۔ یہ ساری بات بھی فرض کرنا پڑے گی کہ مدینۃ النبی میں ایسا ہو رہا تھا۔ جب کہ ہمیں اس چال بازی سے سود بنانے کے کوئی شواہد نہیں ملتے۔ صرف ذخیرہ اندوزی کے شواہد ملتے ہیں۔
بہرحال اگر متن کو پیوند شدہ نہ مانا جائے تومذکورہ بالا قسم کی دُور کی بے شمار کوڑیاں لانی پڑیں گی۔مزید یہ کہ یہ بات بعید از قیاس ہے کہ بنیادی چیزوں کی ادھارخریدو فروخت پر پابندی لگا دی جائے۔ یہ تو لوگوں کو نہایت سخت آزمایش میں ڈالنے والی بات ہے۔
اس دراز نفسی سے صرف یہ کہنا مقصود ہے کہ اس روایت کے متن میں راویوں نے یا محدثین نے کوئی ایسی تبدیلی کردی ہے کہ ایک حقیقت سے اس کا ٹکراؤپیدا ہور ہا ہے۔ اب صرف ایک ہی حل رہ جاتا ہے کہ اس کو وحی قطعی مان کر سمجھ آئے نہ آئے تعبداً مان لیا جائے۔ ہمارے اہل ظاہر نے ایسا ہی کیا، پھر تمام فقہا نے بھی ماننا شروع کردیا ہے۔چنانچہ اسے ربا الفضل کا نام دے دیا گیا کہ یہ عام مانے ہوئے ربا سے مختلف ایک ربا ہے۔ یہ شریعت کاحقیقی ربا پرایک اضافہ ہے ، یعنی یہ عام ربا کے تحت سمجھ میں نہیں آ سکتا، لہٰذا سرفگندگی میں مان لو۔ ہماری راے میں یہ محدثین و رواۃ کے دومتون کے باہم پیوند سے ایک ناقابل فہم متن تشکیل ہوگیا ہے، اگر ہم صحیح متون تک پہنچ جائیں تو ربا الفضل کا قضیہ ہی مٹ جاتا ہے، مزید تحقیق کے لیے استاذ گرامی کی محولہ بالا کتاب: ’’میزان‘‘ کو دیکھا جا سکتا ہے۔ استاذ گرامی نے درج ذیل متن کو صحیح قرار دیا ہے۔ مگر جیسا کہ ہم نے اوپر لکھا اس میں ادھار کو مقدر ماناہے : ۸؂

الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ وَزْناً بِوَزْنٍ مِثْلاً بِمِثْلٍ وَالْفِضَّۃُ بِالْفِضَّۃِ وَزْناً بِوَزْنٍ مِثْلاً بِمِثْلٍ فَمَنْ زَادَ أَوِ اسْتَزَادَ فَہُوَ رِباً. (مسلم، رقم ۴۱۵۲)
’’سونے کے بدلے سونا، اسی وزن اور اسی مثل کا خریدو، اور چاندی کے بدلے چاندی اسی وزن اور اسی مثل کی خریدو، جس نے اضافہ کیا یا کرایا تو یہ اضافہ سود ہوگا۔‘‘

ایک چوتھی صورت بھی ممکن ہے۔ لیکن اس میں اس موضوع کی تمام روایات پر مجموعی انحصار کرنا ہوگا۔ صرف ایک متن سے کام نہیں چلے گا، کیونکہ لگتا ہے کہ کسی متن میں کوئی بات مقدر تھی، وہ بیان نہیں ہوئی، کسی روایت میں انضمام المتن ہو گیا ہے، کسی میں جملوں کی ترتیب بدل گئی ہے اس لیے ضروری ہے کہ اس بات تک پہنچا جائے کہ جو ان تمام روایات کو ایک جامع بات میں پرو دے اور غیر سودی بیع میں سود کا جو مسئلہ پیدا ہو چکا ہے، وہ حل ہو جائے۔یہ اس لیے ضروری ہے کہ ردی بات کی نسبت بھی رسول کی طرف کرنا درست نہیں ہے۔ تمام متون کو ایک مرتبہ ناقص اور تمام کوایک دوسرے کی تکمیل کرنے والا قرار د ے کر پھر سمجھنے کی کوشش کی جائے ۔ اگر ہم ہرایک متن کو مکمل قرار دے دیں تو اوپر جو میں نے تفصیل کی ہے، اس سے واضح ہے کہ کس قدر سنجیدہ سوالات پیدا ہوجاتے ہیں۔
غور یہ کرنا چاہیے کہ ادھار یا نقد کس صورت میں ایک ہی چیز کے خریدو فروخت سے سود پیدا ہوتا ہے۔ خود صحیح احادیث سے بالحصر یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ سود صرف نسیۂ، یعنی ادھار میں ہوتا ہے۔لہٰذا ان تمام روایتوں میں اس اصولی روایت کی روشنی میں ہم آپ سے آپ یہ مان لیتے ہیں کہ سود والی تمام روایات نسیۂ ہی سے متعلق ہیں، خواہ ان میں ’ادھار‘ کا لفظ آیا ہو یا نہ آیا ہو۔
اب اگلی غور کرنے کی بات یہ ہے کہ کس صورت میں کھجورکوکھجور کے بدلے بیچنے سے سود پیدا ہوتا ہے۔ظاہر ہے اگر ’وزناً بوزنٍ‘ اور ’مثلاً بمثلٍ‘ ہو تو سود نہیں ہوتا۔ یعنی میں نے ایک کلو کھجور آج لی، اور ایک ہفتے بعد وزن اور مثل میں یکساں کھجور واپس کردی تو سود نہیں ہو گا۔لیکن اگر وزن میں یا معیار میں اسے بڑھادیا جائے تو سود ہو جائے گا۔ ایک تیسری چیز ، جیسا کہ ہم نے اوپر ذکر کیا ہے، قیمت ہے ، جو تقریباً سب شارحین کے ہاں فراموش رہی ہے۔تو مثال کے طور پر اگر وزن بھی وہی ہو، معیار بھی وہی ہو، مگر قیمت بدل جائے توکیا سود نہیں ہوگا؟ تو اب ’مثلاً بمثلٍ‘ کے معنی میں قیمت کا مفہوم بھی ڈالنا ہوگا۔ چنانچہ اب یہ کل تین چیزیں ہو جائیں گی: وزن، معیار اور قیمت۔ ان تینوں میں سے کسی ایک میں فرق آ گیا تو سود ہو جائے گا۔
اس کو ایک مثال سے سمجھتے ہیں۔ میں نے آپ سے اکتوبر میں ایک بوری کھجور ادھار لی، اس ماہ اس کی قیمت مثلاً پانچ ہزار روپے بوری تھی۔ جون میں، میں نے یہ کھجورواپس کرنی ہے، جون تک آتے آتے، یہی کھجور مہنگی ہو جائے گی، تب بوری کی قیمت مثلاً چھ ہزارروپے ہو جائے گی۔اب اس بیع میں سود پیدا ہو گیا ہے، یعنی پانچ ہزار روپے پر چھ ہزار روپے وصول کیے گئے۔ تقریباً تمام اجناس میں ایسا ہی ہوتا ہے، فصل آنے کے موسم میں قیمتیں کم ہوجاتی ہیں، مگر جیسے جیسے وقت گزرتا ہے، اجناس کی مقدار میں کمی آتی ہے اور قیمتیں بڑھنے لگتی ہیں۔اس قسم کی بیوع میں سود سے بچنے کا کیا حل ہے؟ وہی کہ ان اجناس کو انھی کے بدلے ادھارنہ خریدا جائے، بلکہ جب بھی خریدا جائے قیمتاً خریدا جائے۔ مثلاً میں نے پانچ ہزار کی بوری لی اور جولائی میں پانچ ہزار روپے ہی واپس کردیے۔ اگر حدیث سنداً اور معناً صحیح ہے تو یہی وہ بات ہے جو آپ نے والئ خیبر سے فرمائی تھی، یعنی جب ایک ہی جنس اسی وزن اور اسی قسم میں بھی لوٹاؤگے تو قیمت میں تبدیلی کی وجہ سے سود پیدا ہوسکتا ہے۔اس لیے پہلے اسے دوسری چیز کے عوض بیچو، اور جب واپس لینی ہو، تو اسی قیمت سے واپس لو۔ یعنی پانچ ہزار کی کھجور ادھار دی تھی، اب پانچ ہزار ہی کی خرید کر واپس لو۔
اس میں جیسے سود کا امکان ہے، ویسے ہی ضرر کا بھی امکان ہے۔ مثلاً اگر جون میں، جب کھجور مہنگی ہو، ادھار پر دی گئی، اور اس وقت لوٹائی گئی، جب نئی فصل کے آنے پر قیمتیں گرجاتی ہیں تو ادھار دینے والے کو نقصان، یعنی ضرر ہو گا۔ اس سے بچنے کا بھی وہی طریقہ ہے، جو آپ نے والئ خیبر کو حکم فرمایا۔ آپ کے تجویز کردہ اس طریقے سے قرض دار اور قرض خواہ، دونوں سود یا ضرر سے بچ جاتے ہیں۔ اس تاویل سے ترددات تو سارے دور ہوجاتے ہیں، مگر ان میں درج ذیل باتیں خود سے فرض کرنا پڑیں گی:
۱۔ راویوں نے موقع محل کو بیان نہیں کیا، یا راویوں نے تو بیان کیا، مگر مصنفین نے طوالت سے بچنے کے لیے موقع محل کو ترک کرکے محض قول رسول کو بیان کردیا، جس سے بات سمجھ میں نہیں آرہی کہ بات کیا ہو رہی تھی۔ موقع محل سے ہماری مراد یہ ہے کہ مثلاً ان روایتوں میں بات ادھار کی چل رہی تھی یا نقدبیع کی۔یہ اس مضمون کی اکثر روایتوں سے واضح نہیں ہوتا۔ مثلاً:

قَالَ أَبُوْ بَکْرَۃَ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ: قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’لَا تَبِیْعُوا الذَّہَبَ بِالذَّہَبِ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ وَالْفِضَّۃَ بِالْفِضَّۃِ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ وَبِیْعُوا الذَّہَبَ بِالْفِضَّۃِ وَالْفِضَّۃَ بِالذَّہَبِ کَیْفَ شِئۡتُمْ‘‘.(بخاری، رقم ۲۱۷۵)
’’یہ صحابی کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سونے کو سونے کے بدلے مت بیچو، سوائے یہ کہ وہ وزن ومعیار میں بالکل ویسا ہی ہو، اور نہ چاندی کے بدلے چاندی بیچو، الاّ یہ کہ وزن ومعیار میں بالکل ایک جیسی ہو، البتہ سونے کے بدلے چاندی اور چاندی کے بدلے سونا جیسے چاہو بیچ سکتے ہو۔‘‘

اسی طر ح یہ روایت دیکھیے:

الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ وَزْناً بِوَزْنٍ مِثْلاً بِمِثْلٍ وَالْفِضَّۃُ بِالْفِضَّۃِ وَزْناً بِوَزْنٍ مِثْلاً بِمِثْلٍ فَمَنْ زَادَ أَوِ اسْتَزَادَ فَہُوَ رِباً.(مسلم، رقم ۴۱۵۲)
’’سونے کے بدلے سونا، اسی وزن اور اسی مثل کا خریدو، اور چاندی کے بدلے چاندی اسی وزن اور اسی مثل کی خریدو، جس نے اضافہ کیا یا کرایا تویہ اضافہ سود ہوگا۔‘‘

درج ذیل روایت بھی موقع محل سے مجرد ہو کر آئی ہے:

یُحَدِّثُ أَنَّ أَبَا ہُرَیْرَۃَ، وَأَبَا سَعِیْدٍ، حَدَّثَاہُ، أَنَّ رَسُوْلَ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ بَعَثَ أَخَا بَنِيْ عَدِيِّ الْأَنْصَارِيَّ، فَاسْتَعْمَلَہُ عَلٰی خَیْبَرَ، فَقَدِمَ بِتَمْرٍ جَنِیْبٍ، فَقَالَ لَہُ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’أَکُلُّ تَمْرِ خَیْبَرَ ہٰکَذَا؟‘‘ قَالَ: لَا وَاللّٰہِ یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ، إِنَّا لَنَشْتَرِي الصَّاعَ بِالصَّاعَیْنِ مِنَ الْجَمْعِ، فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’لَا تَفْعَلُوْا، وَلٰکِنْ مِثْلاً بِمِثْلٍ، أَوْ بِیْعُوْا ہٰذَا وَاشْتَرُوْا بِثَمَنِہِ مِنْ ہٰذَا، وَکَذٰلِکَ الْمِیْزَانُ‘‘. (مسلم، رقم ۱۳۹۵)

’’ابو ہریرہ اور ابو سعید رضی اللہ عنہما دونوں بیان کرتے ہیں کہ آپ نے بنوعدی انصاری کے ایک آدمی کوخیبر کا والی مقرر کیا، تو وہ جنیب قسم کی کھجورلے کر آیا، تو آپ نے اس سے پوچھا کہ آیا خیبر کی تمام کھجوریں ایسی ہی ہیں؟ اس نے عرض کی: نہیں یارسول اللہ، ہم ملی جلی کھجوردے کر دو صاع کے بدلے ایک صاع جنیب خرید لیتے ہیں، آپ نے فرمایا: یو ں نہ کیا کرو، جب اس ملی جلی کھجورکا سودا کرو، تو اسے پہلے بیچو، اور پھر اس کی قیمت سے اچھی کھجورخریدو، ایسے ہی صحیح سودا ہوگا۔‘‘

کلام کا ظاہر ان تینوں روایتوں میں نقد بیع پر دلالت کررہا ہے۔ لیکن اس طرح کی نقد بیع میں سود پیدا ہی نہیں ہوتا۔ جس پر اوپر کی ساری تفصیل گواہ ہے۔
۲۔ یہ فرض کرنا پڑے گا کہ ان اجناس میں قدیم عرب میں بھی وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ قیمت میں اتار چڑھاؤ ہوتا تھا۔
۳۔ یہ ماننا پڑے گا کہ ان اجناس کی قیمت بڑھنے سے سود کا عنصر بیع میں آجاتا ہے، اس کے باوجود کہ قسم بھی وہی اور وزن بھی اتنا ہی لوٹایا گیا ہو۔
۴۔ یہ فرض کرنا پڑے گا کہ یہ تمام روایات قرض یا ادھار کی بیع سے متعلق ہیں، حالاں کہ ان کامضمون نقد بیع پر دلالت کررہا ہے۔
۵۔ یہ ماننا پڑے گا کہ سیدنا بلال والی روایت میں تصرف کر کے ایک جملہ یا دو جملے دوسری روایات سے پیوند کیے گئے ہیں۔

أن أَبَا سَعِیْدٍ، یَقُوْلُ: جَاءَ بِلَالٌ بِتَمْرٍ بَرْنِيٍّ، فَقَالَ لَہُ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’مِنْ أَیْنَ ہٰذَا؟‘‘ فَقَالَ بِلَالٌ: تَمْرٌ کَانَ عِنْدَنَا رَدِيْءٌ، فَبِعْتُ مِنْہُ صَاعَیْنِ بِصَاعٍ لِمَطْعَمِ النَّبِيِّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ عِنْدَ ذٰلِکَ: ’’أَوَّہْ عَیْنُ الرِّبَا لَا تَفْعَلْ، وَلٰکِنْ إِذَا أَرَدْتَ أَنْ تَشْتَرِيَ التَّمْرَ فَبِعْہُ بِبَیْعٍ آخَرَ، ثُمَّ اشْتَرِ بِہِ‘‘.(مسلم، رقم ۱۵۹۴۔ بخاری، رقم ۱۰۸۰)

۶۔ یہ ماننا پڑے گا کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی مذکورہ بالا روایت میں ’إلا ہاء وہاء‘ بھی پیوند ہے، کیونکہ اس طرح نقد بیع ہوتی ہی نہیں ہے۔

عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ یُخْبِرُ عَنْ رَسُوْلِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، قَالَ: ’’الذَّہَبُ بِالذَّہَبِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالْبُرُّ بِالْبُرِّ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالتَّمْرُ بِالتَّمْرِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ وَالشَّعِیْرُ بِالشَّعِیْرِ رِباً إِلَّا ہَاءَ وَہَاءَ‘‘. (صحیح بخاری، رقم۲۱۳۴)

۷۔ یہ ماننا پڑے گا کہ مثل سے مراد قسم، یعنی معیار اور قیمت، دونوں ہیں۔
میرے خیال میں حل دو ہی ہیں: ایک وہ جو استاذ گرامی نے اپنی کتاب ’’میزان‘‘ میں پیش فرمایا ہے کہ ادھار کو بعض طرق میں مقدر مانا جائے اور ’إلاہاء وہاء‘ والی روایت میں پیوند کو حذف کرکے سمجھا جائے۔دوسرا حل یہ ہے کہ مذکورہ بالا تمام مفروضات کو مان کر ایک مخفی ربا کے وجود کو تسلیم کیا جائے، جس کی وضاحت میں نے اوپر کی ہے، اور جس کا حل نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بتایا ہے کہ ’بِیْعُوْا ہٰذَا وَاشْتَرُوْا بِثَمَنِہِ مِنْ ہٰذَا، وَکَذٰلِکَ الْمِیْزَانُ‘ (مسلم، رقم ۱۵۹۳)۔ میرے خیال میں یہ جملہ سارے متون کو حل کرنے میں نہایت درجہ اہمیت رکھتا ہے، کیونکہ یہ کرنسی کے زمانے میں سمجھنا آسان ہے افراط و تفریطِ زر سے سود کیسے پیدا ہوتا ہے۔لیکن بارٹر سسٹم میں ثمن قرار پانے والی اشیا میں اس کی موجودگی کو پالینا ذرا مشکل ہے۔
۸۔ یہ ماننا پڑے گا کہ صرف سونے یا چاندی ہی کونقدی کی حیثیت حاصل نہیں ہوتی، بلکہ بارٹر سسٹم میں بعض دوسری چیزوں کو بھی نقدی کی حیثیت حاصل ہو جاتی ہے۔ جو ثمن کا درجہ پالیتی ہیں۔
اوپر کی بحث سے واضح ہے کہ متون کی صحت پر کس قدر غور وفکر کی ضرورت ہے۔ایسا نہیں ہونا چاہیے کہ ہم راویوں اور محدثین کے سہواً اورفقہی تصرفات سے حدیث نبوی پر الزام آنے دیں۔ نہایت دقتِ نظر سے تمام پہلوؤں کو دیکھنا ہوگا۔ ایسے تمام تصرفات کی جانچ کرنی ہوگی اور نہایت ہمدردی سے تمام مواد کو پرکھ کر تاویل کرنا ہوگی۔
[باقی]
_____
۵؂ اس پیوند کی نشان دہی استاذ گرامی نے اپنی کتاب ’’میزان‘‘ میں کی ہے، دیکھیے ص ۵۰۸۔
۶؂ مزید تفصیل کے لیے دیکھیے استاذ گرامی کی کتاب ’’میزان‘‘ صفحہ ۵۰۸، باب ’’قانونِ معیشت‘‘۔
۷؂ دوسری روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ یہاں ’یداً بید‘ کے الفاظ تھے، جو رہ گئے ہیں:

قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ و سلم: ’’الذہب بالذہب والفضۃ بالفضۃ والبر بالبر والشعیر بالشعیر والتمر بالتمر والملح بالملح مثلاً بمثل سواء بسواء یداً بید فإذا اختلفت ہذہ الأصناف فبیعوا کیف شئتم إذا کان یداً بید‘‘.(صحیح مسلم، رقم ۱۵۸۷ )

۸؂ میزان، جاوید احمد صاحب غامدی ۵۰۸۔

____________



 Collections Add/Remove Entry

You must be registered member and logged-in to use Collections. What are "Collections"?



 Tags Add tags

You are not logged in. Please login to add tags.


Join our Mailing List