Download Urdu Font

What are Collections?

Collections function more or less like folders on your computer drive. They are usefull in keeping related data together and organised in a way that all the important and related stuff lives in one place. Whle you browse our website you can save articles, videos, audios, blogs etc and almost anything of your interest into Collections.

saving...

saving...

Loading...

عرفان شہزاد Profile

عرفان شہزاد

  irfanshehzaad76@gmail.com
Author's Bio
Visit Profile
دین میں معیار حق: شخص یا اصول | اشراق
Font size +/-

دین میں معیار حق: شخص یا اصول

دین اسلام میں کسی شخص کی مطلق اطاعت اور اندھی تقلید کا تصور موجود نہیں ہے۔ کسی انسانی شخصیت کو مطلقاً معیارِ حق قرار نہیں دیا گیا۔ دین میں معیارِ حق، وحی اور اس کے طے کردہ اخلاقی اور شرعی اصول اور قوانین ہیں۔ چنانچہ دینی شخصیت خواہ کوئی بھی ہو، اس کے اقوال، افعال اور اعمال کو دین و شریعت کے معیار پر پورا اترنے کے بعد ہی نمونۂ عمل یا معیارِ مطلوب کے مطابق قرار دیا گیا ہے۔ کسی بھی شخصیت کا کوئی بھی قول اور فعل اگر دین کے مسلمہ اصولوں یا معیارِ مطلوب سے کم نکلے تو اسے رد کرنا ہی دین کا تقاضا ہے۔ اس اصول سے کسی کو بھی استثنا حاصل نہیں، حتیٰ کہ انبیا کو بھی نہیں، جن کو دین میں اعلیٰ ترین منصب حاصل ہے۔ اس اصول کی طرف رہنمائی قرآن مجید نے نہایت وضاحت سے کی ہے۔
محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت کا حکم دیتے ہوئے اللہ نے فرمایا:

وَلَا یَعْصِیْنَکَ فِیْ مَعْرُوْفٍ.(الممتحنہ ۶۰: ۱۲)
’’اور (بیعت کرنے والی یہ خواتین) بھلائی کے کسی معاملے میں تمھاری نافرمانی نہ کریں گی۔‘‘

یہ معلوم ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کسی منکر کا حکم نہیں دے سکتے تھے، تاہم بطور اصول یہ لکھ دیا گیا کہ رسول کی اطاعت بھی صرف معروف، یعنی بھلائی کے کاموں میں ہی کی جا سکتی ہے۔ بالفرض محال، رسول کی بھی کوئی بات غیرمعروف پر مبنی ہوتی تو اس کی اطاعت بھی نہ کی جاتی کہ خالق کی نافرمانی میں کسی مخلوق کی فرماں برداری نہ کرنے کا اصول یہاں بھی لا گو ہے۔
قرآن مجید میں بتایا گیا ہے کہ ایک موقع پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی ازواج کی دل جوئی کے لیے کوئی حلال چیز اپنے اوپر حرام ٹھیرا لی تھی۔ اللہ تعالیٰ نے اس پر آپ کو تنبیہ فرمائی کہ ایسا کرنا آپ کے منصبِ رسالت کے مطابق نہیں تھا۔ آپ کا کردار، آپ کے اعمال و افعال لوگوں کے لیے نمونۂ عمل ہیں، آپ خدا کی کسی حلال چیز کو خود پر حرام نہیں ٹھیرا سکتے۔ یہ ایک غیر ارادی تجاوز تھا جو آپ سے اپنی بیویوں کی دل داری کے لیے ہو گیا تھا، مگر اس پر تنبیہ ہو جانے پر آپ نے اپنی قسم توڑی اور کفارہ ادا فرمایا:

یٰٓاَیُّھَا النَّبِیُّ لِمَ تُحَرِّمُ مَآ اَحَلَّ اللّٰہُ لَکَ تَبْتَغِیْ مَرْضَاتَ اَزْوَاجِکَ وَاللّٰہُ غَفُوْرٌ رَّحِیْمٌ. قَدْ فَرَضَ اللّٰہُ لَکُمْ تَحِلَّۃَ اَیْمَانِکُمْ وَاللّٰہُ مَوْلٰکُمْ وَھُوَ الْعَلِیْمُ الْحَکِیْمُ.(التحریم ۶۶: ۱۔۲)
’’اے نبی، تم اپنی بیویوں کی دل داری میں وہ چیز کیوں حرام ٹھیراتے ہو، جو اللہ نے تمھارے لیے جائز رکھی ہے؟ (خیر جو ہوا سو ہوا)، اللہ بخشنے والا ہے، اُس کی شفقت ابدی ہے۔ اپنی اِس طرح کی قسموں کو توڑ دینا اللہ نے تم پر فرض کر دیا ہے اور اللہ ہی تمھارا مولیٰ ہے اور وہ علیم و حکیم ہے۔‘‘

یہاں آپ کا پہلا عمل نمونۂ تقلید نہ تھا، اس لیے بروقت اس کی اصلاح کر کے اسے اس لحاظ سے نمونۂ تقلید بنا دیا گیا کہ اگر اس قسم کی کوئی قسم اٹھا لی جائے تو اس کا توڑنا واجب ہے۔
اسی طرح دیگر انبیا کے قصص بھی قرآن میں موجود ہیں۔ موسیٰ علیہ السلام کے ہاتھ سے ایک قبطی کا قتل ہو گیا۔ آپ نے اسے شیطانی فعل قرار دیا، خدا سے معافی مانگی۔ خدا نے بھی یہ نہیں کہا کہ کوئی بات نہیں، آپ سے غیرت میں آ کر قتل ہو گیا ہے، نیز آپ کا ارادہ تو تھا بھی نہیں، اور مرنے والا ایک کافر اور ظالم قوم کا فرد تھا۔ اس کے برعکس اللہ نے اس فعل کو جرم ہی قرار دیا کہ یہ اگرچہ غیر ارادی طور پر سرزد ہوا، تاہم تھا یہ قتلِ خطا کا جرم ہی، چنانچہ اس پر معافی مانگنے پر اللہ نے آپ کو معاف فرمایا اور آپ نے اس پر اللہ کا شکر ادا کیا:

وَدَخَلَ الْمَدِیْنَۃَ عَلٰی حِیْنِ غَفْلَۃٍ مِّنْ اَھْلِھَا فَوَجَدَ فِیْھَا رَجُلَیْنِ یَقْتَتِلٰنِ ھٰذَا مِنْ شِیْعَتِہٖ وَھٰذَا مِنْ عَدُوِّہٖ فَاسْتَغَاثَہُ الَّذِیْ مِنْ شِیْعَتِہٖ عَلَی الَّذِیْ مِنْ عَدُوِّہٖ فَوَکَزَہٗ مُوْسٰی فَقَضٰی عَلَیْہِ قَالَ ھٰذَا مِنْ عَمَلِ الشَّیْطٰنِ اِنَّہٗ عَدُوٌّ مُّضِلٌّ مُّبِیْنٌ. قَالَ رَبِّ اِنِّیْ ظَلَمْتُ نَفْسِیْ فَاغْفِرْلِیْ فَغَفَرَلَہٗ اِنَّہٗ ھُوَالْغَفُوْرُ الرَّحِیْمُ. قَالَ رَبِّ بِمَآ اَنْعَمْتَ عَلَیَّ فَلَنْ اَکُوْنَ ظَھِیْرًا لِّلْمُجْرِمِیْنَ.(القصص ۲۸: ۱۵۔۱۷)

’’(ایک دن اتفاق سے) وہ ایسے وقت شہر میں داخل ہوا، جب کہ شہر کے لوگ بے خبر ہوتے تھے تو اُس نے دیکھا کہ دو آدمی وہاں لڑ رہے ہیں۔ ایک اُس کی اپنی قوم میں سے تھا اور دوسرا اُس کے دشمنوں کی قوم میں سے۔ پھر اُس کی قوم کے آدمی نے اُس شخص کے مقابل میں اُس کی مدد چاہی جو اُس کے دشمنوں میں سے تھا تو موسیٰ نے اُس کے گھونسا مارا اور اُس کا کام تمام کر دیا۔ (یہ حرکت سرزد ہوتے ہی) موسیٰ نے کہا: یہ تو مجھ سے شیطانی کام ہو گیا ہے۔ اِس میں شبہ نہیں کہ شیطان ایک کھلا ہوا گمراہ کرنے والا دشمن ہے۔ اُس نے دعا کی کہ میرے پروردگار، میں نے اپنی جان پر ظلم کیا ہے، سو مجھ کو بخش دے تو اُس کے پروردگار نے اُسے بخش دیا۔ حقیقت یہ ہے کہ وہی بخشنے والا ہے، اُس کی شفقت ابدی ہے۔ موسیٰ نے کہا: میرے پروردگار، یہ عنایت جو تو نے مجھ پر فرمائی ہے، اِس کے بعد تو اب میں اِس طرح کے مجرموں کا کبھی مددگار نہ بنوں گا۔‘‘

پھر ایک اور موقع پر جب موسیٰ علیہ السلام پہلی دفعہ خدا کے ساتھ ہم کلام ہوئے اور عصا کو سانپ میں تبدیل ہوتے دیکھ کر آپ خوف زدہ ہوئے تو اس پر خدا نے موسیٰ علیہ السلام کے اسی جرم کی طرف اشارہ کر کے فرمایا کہ رسولوں کو اللہ کے حضور ڈرنے کی ضرورت نہیں۔ ڈرے وہ جس نے کوئی ظلم کیا ہو۔ موسیٰ علیہ السلام سے قبطی کے قتل کے معاملے میں ظلم ہو گیا تھا، لیکن چونکہ آپ نے توبہ کر کے اور آیندہ ایسے کسی طرز عمل سے خود کو بچا کر خدا سے معافی حاصل کر لی تھی، اس لیے آپ کو بھی ڈرنے کی ضرورت نہیں:

یٰمُوْسٰٓی اِنَّہٓٗ اَنَا اللّٰہُ الْعَزِیْزُ الْحَکِیْمُ. وَاَلْقِ عَصَاکَ فَلَمَّا رَاٰھَا تَھْتَزُّ کَاَنَّھَا جَآنٌّ وَّلّٰی مُدْبِرًا وَّلَمْ یُعَقِّبْ یٰمُوْسٰی لَا تَخَفْ اِنِّیْ لَا یَخَافُ لَدَیَّ الْمُرْسَلُوْنَ. اِلَّا مَنْ ظَلَمَ ثُمَّ بَدَّلَ حُسْنًام بَعْدَ سُوْٓءٍ فَاِنِّیْ غَفُوْرٌ رَّحِیْمٌ.(النمل ۲۷: ۹۔۱۱)
’’اے موسیٰ، یہ میں ہوں اللہ، زبردست اور حکیم (اِس لیے مضبوط ہو جاؤ) اور اپنی لاٹھی (زمین پر) ڈال دو۔ پھر جب موسیٰ نے اُس کو دیکھا کہ وہ اِس طرح بل کھا رہی ہے ، گویا وہ سانپ ہے تو پیٹھ پھیر کر بھاگا اور پلٹ کر دیکھا بھی نہیں۔ (ارشاد ہوا): اے موسیٰ، ڈرو نہیں، میرے حضور پیغمبر ڈرا نہیں کرتے۔ ہاں مگر جو برائی کے مرتکب ہوں، پھر برائی کے بعد وہ اُسے بھلائی سے بدل دیں تو (اُن کے لیے)میں بڑا بخشنے والا اور بڑا مہربان ہوں۔‘‘

اسی تناظر میں نہایت اہم واقعہ یونس علیہ السلام کا ہے۔ وہ خدا کے حکم سے پہلے اپنی بستی کو چھوڑ کر چلے گئے تھے۔ اس پر ان کو نہ صرف تنبیہ ہوئی، بلکہ چالیس دن مچھلی کے پیٹ میں قید رکھ کر سزا بھی دی گئی، بلکہ یہاں تک کہا گیا کہ اگر وہ اپنی اس خطا پر خدا سے معافی طلب نہ کرتے تو مچھلی کا وہی پیٹ ان کا مدفن بن جاتا:

وَذَا النُّوْنِ اِذْ ذَّھَبَ مُغَاضِبًا فَظَنَّ اَنْ لَّنْ نَّقْدِرَ عَلَیْہِ فَنَادٰی فِی الظُّلُمٰتِ اَنْ لَّآ اِلٰہَ اِلَّآ اَنْتَ سُبْحٰنَکَ اِنِّیْ کُنْتُ مِنَ الظّٰلِمِیْنَ.(الانبیاء ۲۱: ۸۷)
’’اور مچھلی والے (یونس) پر بھی، جب وہ (اپنی قوم سے) برہم ہو کر چلا گیا اور اُس نے خیال کیا کہ ہم اُس پر کوئی گرفت نہ کریں گے۔ لیکن پھر اندھیروں میں پکار اٹھا کہ (پروردگار)، تیرے سوا کوئی الٰہ نہیں، تو پاک ہے، بے شک میں ہی قصور وار ہوں۔‘‘
وَاِنَّ یُوْنُسَ لَمِنَ الْمُرْسَلِیْنَ. اِذْ اَبَقَ اِلَی الْفُلْکِ الْمَشْحُوْنِ. فَسَاھَمَ فَکَانَ مِنَ الْمُدْحَضِیْنَ. فَالْتَقَمَہُ الْحُوْتُ وَھُوَ مُلِیْمٌ. فَلَوْلَآ اَنَّہٗ کَانَ مِنَ الْمُسَبِّحِیْنَ. لَلَبِثَ فِیْ بَطْنِہٖٓ اِلٰی یَوْمِ یُبْعَثُوْنَ. فَنَبَذْنٰہُ بِالْعَرَآءِ وَھُوَ سَقِیْمٌ. وَاَنْبَتْنَام عَلَیْہِ شَجَرَۃً مِّنْ یَّقْطِیْنٍ. وَاَرْسَلْنٰہُ اِلٰی مِائِۃِاَلْفٍ اَوْ یَزِیْدُوْنَ.(الصافات ۳۷: ۱۳۹۔۱۴۷)
’’یونس بھی یقیناًپیغمبروں میں سے تھا۔ یاد کرو، جب وہ (اپنی قوم کو چھوڑ کر)کشتی کی طرف بھاگ نکلا۔ جو (مسافروں سے) بھر چکی تھی۔ پھر (کشتی طوفان میں گھر گئی اور اُن کے کہنے پر) اُس نے قرعہ ڈالا تو (اُسی کے نام پر نکلا اور)وہ (دریا میں)پھینک دیا گیا۔ پھر اُس کو مچھلی نے نگل لیا اور وہ سزاوار ملامت ہو چکا تھا۔ سو اگر وہ تسبیح کرنے والوں میں سے نہ ہوتا۔ تو اُس دن تک مچھلی کے پیٹ ہی میں پڑا رہتا، جب لوگ اٹھائے جائیں گے۔‘‘

اسی تناظر میں ایک واقعہ نوح علیہ السلام کا قرآن مجید میں نقل ہوا ہے۔ ان کی قوم پر جب طوفان آیا تو ان کا بیٹا بھی اس میں ڈوب گیا۔ اللہ تعالیٰ نے طوفان سے پہلے نوح علیہ السلام کو بتا دیا تھا کہ وہ اپنے اہل عیال کو کشتی میں سوار کرا لیں اور یہ بھی بتا دیا تھا کہ اُس طوفان سے وہی بچیں گے جو ایمان والے ہوں گے:

حَتّٰٓی اِذَا جَآءَ اَمْرُنَا وَفَارَ التَّنُّوْرُ قُلْنَا احْمِلْ فِیْھَا مِنْ کُلٍّ زَوْجَیْنِ اثْنَیْنِ وَاَھْلَکَ اِلَّا مَنْ سَبَقَ عَلَیْہِ الْقَوْلُ وَمَنْ اٰمَنَ وَمَآ اٰمَنَ مَعَہٗٓ اِلَّا قَلِیْلٌ.(ہود ۱۱: ۴۰)
’’یہاں تک کہ جب ہمارا حکم آ پہنچا اور طوفان ابل پڑا تو ہم نے کہا: ہر قسم کے جانوروں میں سے نر و مادہ، ایک ایک جوڑا کشتی میں رکھ لو اور اپنے گھر والوں کو بھی (اِس کشتی میں سوار کرا لو)، سو اے اُن کے جن کے بارے میں حکم صادر ہو چکا ہے، اور اُن کو بھی جو ایمان لائے ہیں — اور تھوڑے ہی لوگ تھے جو اُس کے ساتھ ایمان لائے تھے۔‘‘

نوح علیہ السلام کا بیٹا باوجود باپ کی درد مندانہ اپیل کے ان کے ساتھ شامل ہونے سے انکاری رہا اور موجوں کا شکار ہو کر ڈوب گیا:

وَھِیَ تَجْرِیْ بِہِمْ فِیْ مَوْجٍ کَالْجِبَالِ وَنَادٰی نُوْحُ نِ ابْنَہٗ وَکَانَ فِیْ مَعْزِلٍ یّٰبُنَیَّ ارْکَبْ مَّعَنَا وَلَا تَکُنْ مَّعَ الْکٰفِرِیْنَ. قَالَ سَاٰوِیْٓ اِلٰی جَبَلٍ یَّعْصِمُنِیْ مِنَ الْمَآءِ قَالَ لَا عَاصِمَ الْیَوْمَ مِنْ اَمْرِاللّٰہِ اِلَّا مَنْ رَّحِمَ وَحَالَ بَیْنَھُمَا الْمَوْجُ فَکَانَ مِنَ الْمُغْرَقِیْنَ.(ہود ۱۱: ۴۲۔۴۳)
’’وہ کشتی پہاڑوں کی طرح اٹھتی ہوئی موجوں کے درمیان اُن کو لے کر چلنے لگی اور نوح نے اپنے بیٹے کو آواز دی، جو (کچھ فاصلے پر اُس سے)الگ تھا۔ بیٹا، ہمارے ساتھ سوار ہو جاؤ اور اِن منکروں کے ساتھ نہ رہو۔ اس نے پلٹ کر جواب دیا: میں ابھی کسی پہاڑ کی پناہ لے لوں گا جو مجھے اِس پانی سے بچا لے گا۔ نوح نے کہا: آج اللہ کے حکم سے کوئی بچانے والا نہیں ہے، مگر جس پر وہ رحم فرمائے۔ (اتنے میں) ایک موج دونوں کے درمیان حائل ہوئی اور وہ بھی ڈوبنے والوں میں شامل ہو گیا۔‘‘

خدا کا حکم واضح تھا کہ نجات کس کے لیے ہے، لیکن نوح علیہ السلام اپنے بیٹے کی محبت میں جذبات سے مغلوب ہو کر خدا سے سوال کر بیٹھے:

وَنَادٰی نُوْحٌ رَّبَّہٗ فَقَالَ رَبِّ اِنَّ ابْنِیْ مِنْ اَھْلِیْ وَاِنَّ وَعْدَکَ الْحَقُّ وَاَنْتَ اَحْکَمُ الْحٰکِمِیْنَ.(ہود ۱۱: ۴۵)
’’نوح نے اپنے رب کو پکارا اور کہا کہ پروردگار، میرا بیٹا تو میرے گھر والوں میں سے ہے اور اِس میں شبہ نہیں کہ تیرا وعدہ سچا ہے اور تو سب فیصلہ کرنے والوں سے بڑا فیصلہ کرنے والا ہے۔ ‘‘

اس پر انھیں پر جلال تنبیہ کی گئی کہ آپ کو بتا دیا گیا تھا کہ اس عذاب سے صرف اہل ایمان بچیں گے اور آپ کا بیٹا اہل ایمان میں سے نہ تھا، بلکہ سخت ناہنجار تھا۔ اس پر فوراً نوح علیہ السلام نے خدا سے معافی مانگی:

قَالَ یٰنُوْحُ اِنَّہٗ لَیْسَ مِنْ اَھْلِکَ اِنَّہٗ عَمَلٌ غَیْرُ صَاِلحٍ فَلَا تَسْئَلْنِ مَا لَیْسَ لَکَ بِہٖ عِلْمٌ اِنِّیْٓ اَعِظُکَ اَنْ تَکُوْنَ مِنَ الْجٰھِلِیْنَ. قَالَ رَبِّ اِنِّیْٓ اَعُوْذُبِکَ اَنْ اَسْءَلَکَ مَا لَیْسَ لِیْ بِہٖ عِلْمٌ وَاِلَّا تَغْفِرْلِیْ وَتَرْحَمْنِیْٓ اَکُنْ مِّنَ الْخٰسِرِیْنَ.(ہود ۱۱: ۴۶۔۴۷)

’’فرمایا: اے نوح، وہ تیرے گھر والوں میں سے نہیں ہے، وہ نہایت نابکار ہے۔ سو مجھ سے اُس چیز کے بارے میں سوال نہ کرو جس کا تجھے کچھ علم نہیں ہے۔ میں تجھے نصیحت کرتا ہوں کہ جذبات سے مغلوب ہو جانے والوں میں سے نہ بنو۔ نوح نے فوراً عرض کیا: پروردگار، میں تیری پناہ مانگتا ہوں کہ تجھ سے کوئی ایسی چیز مانگوں جس کا مجھے علم نہیں ہے۔ اور (جانتا ہوں کہ)اگر تو مجھے معاف نہ کرے گا اور مجھ پر رحم نہ فرمائے گا تو میں نامراد ہو جاؤں گا۔‘‘

سب سے بڑھ کر یہ کہ اس دنیا میں کتاب ہستی کے پہلے صفحے پر آدم علیہ السلام کی غلطی رقم ہے، جس پر انھیں جنت سے خارج کر دیا گیا تھا۔ نمونۂ عمل، البتہ ان کا یہ فعل بنا کہ انسان کو غلطی کے بعد شیطان کی طرح اپنی غلطی پر اڑ نہیں جانا چاہیے، بلکہ ندامت کے ساتھ خدا سے معافی مانگ کر خدا سے تعلق استوار کر لینا چاہیے:

وَعَصٰٓی اٰدَمُ رَبَّہٗ فَغَوٰی. ثُمَّ اجْتَبٰہُ رَبُّہٗ فَتَابَ عَلَیْہِ وَھَدٰی.(طٰہٰ ۲۰: ۱۲۱۔۱۲۲)
’’اِس طرح آدم نے اپنے پروردگار کی نافرمانی کی اور راہ راست سے بھٹک گیا۔ پھر اُس کے پروردگار نے اُس کو برگزیدہ کیا۔ سو اُس کی توبہ قبول فرمائی اور اُسے راستہ دکھا دیا۔‘‘

خلاصۂ کلام یہ ہے کہ وحی کی روشنی میں پیغمبر، ہمارے لیے نمونۂ عمل اس لیے بنتے ہیں کہ ان کے درست اعمال پر خدا کی طرف سے کھلی یا خاموش تائید اور ان سے سرزد ہو جانے والی فرو گذاشتوں پر بروقت تنبیہ آ جاتی تھی، جس سے مطلوبہ معیاری عمل واضح ہو کر سامنے آ جاتا تھا، لیکن وحی کا سلسلہ رک جانے کے بعد، ایسا کوئی امکان ہی موجود نہیں کہ کوئی شخصیت کامل نمونۂ عمل بن سکے۔ زمانہ بعد از وحی میں، دینی شخصیات کی فروگذاشتوں پر خدا کی طرف سے نہیں، بلکہ اسی وحی کی روشنی میں اس وحی کا فہم رکھنے والوں کی طرف سے تنبیہ اور تنقید کی جاتی رہی ہے اور کی جاتی رہے گی۔ اس وحی کی کسوٹی پر جس کا عمل پورا اترے گا، اس کا وہی عمل نمونۂ عمل اور لائق تقلید مانا جائے گا۔ کوئی شخصیت اور اس کا کوئی عمل بھی اپنے آپ میں کوئی معیار نہیں ہے۔ اس اصول سے کسی بھی شخصیت کو استثنا حاصل نہیں۔

____________




 Collections Add/Remove Entry

You must be registered member and logged-in to use Collections. What are "Collections"?



 Tags Add tags

You are not logged in. Please login to add tags.


Join our Mailing List