بچے کی دعا
 

اٹھاتا ہوں پھر ہاتھ لب پر دعا ہے
مرے ننھے منے سے دل کی صدا ہے
مجھے ایک شمع ہدایت بنا دے
زمانے پہ اپنی عنایت بنا دے
مرے امی ابا کو راحت ہو مجھ سے
مرے بھائی بہنوں کو چاہت ہو مجھ سے
میں دیکھوں جب ان کو تو خورسند دیکھوں
اُنھیں ہر قدم پر رضا مند دیکھوں
بڑا ہوں تو اِن سب کی خدمت کروں میں
مرے آقا ، تیری عبادت کروں میں
غریبوں کا ہمدرد بن کر رہوں میں
ضعیفوں کو تکلیف ہو تو سہوں میں
تجھے یاد کرتا رہوں زندگی بھر
تجھی سے میں ڈرتا رہوں زندگی بھر
جہاں میں ترے گیت گاتا رہوں میں
ترے دین کے کام آتا رہوں میں
اگر ہو تو نیکی سے الفت ہو مجھ کو
برائی سے ہو گر عداوت ہو مجھ کو
مجھے رات دن شکر کرنا سکھا دے
ہر اندوہ میں صبر کرنا سکھا دے
بہارِ وطن ہو مری زندگانی
رہوں اس میں جنت کی بن کر نشانی
خدایا ، میں خوابوں کو سچ کر دکھاؤں
زمیں پر نئی ایک دنیا بناؤں

________