ترے سامنے یہ زمیں آسماں        خداوند عالم کا سارا جہاں
یہ تاروں کے چلتے ہوئے کارواں        یہ رستے بدلتی ہوئی کہکشاں
یہ سورج سروں پر چمکتا ہوا        یہ راتوں میں چندا دمکتا ہوا
عجب مرحلوں سے گزرتا ہوا        نئے سے نیا روپ بھرتا ہوا
افق پر سر شام سونے کے ڈھیر        اڑا کر جنھیں رات دیتی ہے پھیر
فضا ابر کے بعد نکھری ہوئی        دھنک اس کے دامن پہ بکھری ہوئی
یہ بجلی ، یہ کڑکا، یہ بارش کا زور        یہ جنگل میں اس کے برسنے کا شور
زمیں پر کھڑے کوہساروں کی شان        ہمالہ کی ، الوند کی آن بان
یہ گرتی ہوئی آبشاروں کے گیت        یہ اڑتے ہوئے سنگ پاروں کے گیت
ہوائیں بہت نرم چلتی ہوئی        بپھرتی ہوئی ، کچھ سنبھلتی ہوئی
چٹانوں سے برفاب بہتا ہوا        ستم رہ گزاروں کے سہتا ہوا
یہ وادی میں پھر اس کا حسن خرام        درختوں کا جھک جھک کے اس کو سلام
سمندر کے سینے میں لہروں کا جوش        اڑاتا ہے سہراب و رستم کے ہوش
حسیں وادیاں ، یہ حسیں مرغزار        یہ حدِ نظر تک شجر بے شمار
مہکتے ہوئے پھول ہر رنگ میں        پرندے چہکتے ہر آہنگ میں
یہ حسن فراواں کہ ہے سنگ میں        کبھی موقلم میں ، کبھی چنگ میں
کبھی لفظ و معنی کے اسرار میں        کبھی علم و حکمت کے اظہار میں
کبھی دل کے جذبوں کی تعبیر میں        کبھی اینٹ پتھر کی تعمیر میں
یہ آنکھیں ، یہ چہرے ، یہ رنگیں لباس        یہ پیکر کہ ہے جن میں پھولوں کی باس
یہ لمحوں میں حرف و صدا کا سفر        ہر انداز کا ، ہر ادا کا سفر
ہواؤں میں اڑتے ہوئے راہوار        خلا میں ٹہلتے ہوئے شہ سوار
یہ امی ، یہ ابا ، یہ بھائی بہن        یہ شہروں کی رونق ، یہ دولت ، یہ دھن
لبھاتا ہے دل کو یہ سب ، اے پسر        الجھتی ہے رہ رہ کے اس میں نظر
بہت خوب صورت ، بہت دل نواز        بجا ہے کہ خالق کو ہو اس پہ ناز
تم اس میں رہو ، اس میں آگے بڑھو        ترقی کی سب منزلیں طے کرو
تمھیں روزو شب یہ مبارک رہے        ملا ہے تو اب یہ مبارک رہے
ہمیشہ مگر ہو یہ مد نظر        کہ ہے زندگانی یہاں اک سفر
تمھیں ایک دن اس سے جانا بھی ہے        اسے دے کے کچھ اور پانا بھی ہے
وہ جو کچھ ہے اس سے کہیں بڑھ کے ہے        نہیں اس کے پاسنگ بھی کوئی شے
حقیقت ہے وہ ، یہ متاعِ غرور        وہ آنکھوں کی ٹھنڈک ، وہ دل کا سرور
مری جان ، اُس کو بھلانا نہیں
اُسے کھو کے دنیا کو پانا نہیں

________