مسئلہ عراق 

آج سے تیس برس پہلے 1979ء میں صدام حسین نے ایک فوجی انقلاب کے ذریعے برسراقتدار آکر ظلم وستم اور عراق اور امتِ مسلمہ کی بربادی کا ایک باب خود اپنے ہاتھ سے لکھنا شروع کیا۔اقتدار میں آنے کے ایک برس بعد صدام نے ایران کے خلاف جنگ چھیڑدی جو آٹھ سال تک جاری رہی۔ اس جنگ میں چھ لاکھ ایرانی اور چار لاکھ عراقی جاں بحق ہوئے۔ اس آٹھ سالہ لڑائی میں دونوں ممالک کی معیشت بیٹھ گئی۔ دونوں ممالک نے امریکہ اور اسرائیل سے اسلحہ خرید کر ایک دوسرے کو مارا اور امریکہ اور اسرائیل کو بڑا فائدہ پہنچایا۔ 
اس جنگ کے خاتمے کے دو برس بعداگست1990ء میں صدام نے کویت پر حملہ کرکے اُسے فتح کرلیا۔ ساری دنیا نے عراق کی مذمت کی۔ اقوام متحدہ نے اُسے الٹی میٹم دیا کہ وہ کویت کو خالی کردے ورنہ اُس کے خلاف فوجی کاروائی کی جائے گی۔ ساڑھے پانچ مہینے بعد یعنی جنوری 1991کو امریکہ اور اُس کے اتحادی افواج نے عراقی شہریوں پر بمباری شروع کردی۔ یہ بمباری ایک مہینے جاری رہی اور اُس میں عراق کا تقریباً سارا انفراسٹرکچر تباہ ہوکر رہ گیا، مگر صدام اپنی ضد پر اڑا رہا۔ فروری میں اتحادی افواج نے زمینی حملہ شروع کیا اور دوتین دن کے اندر اندر کویت کو آزاد کرلیا۔ اس جنگ میں عراق کے تقریباً ڈیڑھ لاکھ شہری اور فوجی جاں بحق ہوئے۔ کویت کی ساری دولت جنگی اخراجات کے نام پر امریکہ کے پاس چلی گئی۔ سعودی عرب کا بھی چالیس ارب ڈالر سے زیادہ کا خرچ آیا کیونکہ صدام نے کہہ دیا تھا کہ اس کے بعد وہ سعودی عرب پر بھی حملہ کرے گا۔ 
اس عظیم نقصان سے بھی صدام نے کوئی سبق نہیں سیکھا اور وہ بدستور بڑے کروفر کے ساتھ حکمرانی کرتا رہا۔ صدام نے عراقی قوم کو تین حصوں میں تقسیم کردیا۔ چونکہ وہ خود سُنی تھا اس لیے اُس نے عرب سُنی قبائل کو ساتھ ملایا۔ اُس نے ساٹھ فیصد اہلِ تشیع پر بڑے مظالم ڈھائے اور اسی طرح بیس فیصد سُنی کُردوں کو بھی ظلم وستم کا نشانہ بنایا۔ 1987ء میں اُس نے کُردوں کے خلاف کیمیاوی ہتھیار استعمال کرکے ہزاروں لوگوں، بشمول عورتوں اور بچوں ، کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔ 
2002ء کے آخری مہینوں میں امریکہ نے اپنی کچھ اغراض کے لیے چاہا کہ وہ صدام حسین کے اقتدار کا خاتمہ کرے۔ امریکہ نے الزام لگایا کہ عراق کے پاس بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیار موجود ہیں۔ یہ بات قطعاً جھوٹ تھی۔ سوائے برطانیہ کے سارے مغربی ممالک نے امریکی دعوے کو غلط قرار دیا۔ اقوام متحدہ نے بھی امریکہ کی حمایت کرنے سے انکارکردیا۔ دسمبر2002ء میں امریکہ نے صدام حسین کو یہ الٹی میٹم دیا کہ وہ اپنے قریبی ساتھیوں سمیت عراق چھوڑ دے۔ سعودی عرب نے اعلان کیا کہ وہ صدام اور اُس کے ساتھیوں کو سیاسی پناہ دینے کے لیے تیار ہے۔ اُس وقت راقم نے اپنے ایک مضمون میں یہ لکھا کہ’’ اگرچہ امریکہ کا الزام بالکل غلط ہے تاہم ضرورت اس بات کی ہے کہ عراقی عوام کوامریکہ کے ظلم وستم سے بچایا جائے۔ اس کا حل یہ ہے کہ صدام اقتدارعراقی دانشوروں پر مشتمل ایک عبوری حکومت کے حوالے کرکے خود اپنے خاندان سمیت سعودی عرب چلا جائے اور یہ عبوری حکومت اگلے تین ماہ کے اندر اندر عراق میں انتخاب کرواکر اقتدار منتخب نمائندوں کے سپرد کردے‘‘۔ تاہم صدام آنے والی تباہی کا تجزیہ نہ کرسکا اور اُس نے اس موقعے سے بھی کوئی فائدہ نہ اٹھایا۔ ویسے بھی بدقسمتی سے عالم اسلام کے اندر وسیع تر مفادات کے لیے اپنی انا کو قربان کرنے کا رجحان بہت کم ہے۔ 
بالآخر امریکہ نے مارچ 2003میں عراق پر حملہ کردیا۔ یہ ایک بہت بڑا جرم تھا۔ یہ لڑائی ابھی تک جاری ہے۔ پچھلے برسوں میں اندازاً چھ لاکھ عراقی اس کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں۔ دوسری طرف امریکہ کا بھی کچھ کم نقصان نہیں ہوا۔ اُسے اس لڑائی پر ہر مہینے اندازاً ایک ارب ڈالرکی رقم کرنی پڑرہی ہے جس سے اُس کی معیشت کو بڑا نقصان پہنچا ہے۔ اُس کے کم وبیش چار ہزار سپاہی اس جنگ میں کام آچکے ہیں۔ خود امریکی قوم کی واضح اکثریت اس جنگ کے خلاف ہے۔ 
یہ بھی ایک دلخراش حقیقت ہے کہ اس جنگ میں سنیوں اور شیعوں نے بھی ایک دوسرے کا بہت خون بہایا ہے۔ زیادہ تر جانی نقصان ان دونوں گروہوں کی لڑائی سے ہوا ہے۔ عراق کے اندر نوے فیصد خودکش حملے امریکی افواج پر نہیں بلکہ ان دونوں فرقوں نے ایک دوسرے کے خلاف کیے ہیں۔ 
مسئلہ عراق کا واحد حل یہ ہے کہ شیعہ، سُنی اور کُرد بیٹھ کرٹھنڈے دل ودماغ کے ساتھ، کچھ لو اور کچھ دو کی بنیاد پر ایک پُرامن حل پر متفق ہوجائیں۔ صرف اسی طرح وہ غاصب اور جارح غیر ملکی افواج سے اپنا پیچھا چھڑاسکتے ہیں۔ 


مسئلہ فلسطین 

اسرائیلی ریاست کی تخلیق برطانیہ کا ایک بڑا ظلم تھا اور اس ریاست کی مسلسل تعمیر اور حمایت امریکہ کی ایک بڑی بے انصافی ہے۔ اس لیے مشرقی وسطیٰ کی اب تک ساری خونریزی کی اصل ذمہ داری ان دونوں پر عائد ہوتی ہے۔ اسرائیل نے امریکہ کو یہ یقین دلایا ہے کہ وہ مشرق وسطیٰ میں اُس کے سب مفادات کا رکھوالا ہے اور وہ اپنے کلچر اور اقدار میں امریکہ کی پیروی کررہا ہے۔ اس لیے امریکہ بھی اسرائیل کو عملاً اپنی اکیاون ویں ریاست سمجھتا ہے اور اسی حیثیت سے اُس کے ساتھ امداد اور تعاون کرتا ہے۔ امریکہ ہر معاملے میں اسرائیل کی اندھا دھند حمایت کرتا ہے اور اسرائیل کے صریحاً ناجائز اقدامات پر بھی امریکہ نے کچھ نہیں کیا۔ 
تاہم اسرائیل کے قیام میں سلطنتِ عثمانیہ اور خود عربوں کی عملی مدد کا بھی بڑا کردار ہے۔ اگر سلطنتِ عثمانیہ پہلی جنگِ عظیم میں جرمنی کا ساتھ نہ دیتی تو برطانیہ فلسطین پر حملہ نہ کرتا۔ اگر سرزمینِ عرب کا ہاشمی خاندان انگریزوں کی مدد نہ کرتا تو برطانیہ کبھی فلسطین پر قابض نہیں ہوسکتا تھا۔ اگر مصراور مراکش اپنے ہاں کے یہودیوں کو اسرائیل جانے کی اجازت نہ دیتے تو اسرائیل کی آبادی نہیں بڑھ سکتی تھی۔ 
عالمِ عرب نے اقوام متحدہ کی متعدد قراردادیں تسلیم نہ کرکے بے بصیرتی کا ثبوت دیا۔ اگر عرب ممالک 1948ء کی اقوام متحدہ کی قرار داد مان لیتے تو اسرائیل آج کی نسبت ایک تہائی ہوتا اور 1948ء میں ہی فلسطینی ریاست بھی بن جاتی۔ 1967ء تک آدھا فلسطین اُردن کے قبضے میں تھا اور آدھا فلسطین مصر کے قبضے میں تھا۔ مگر ان دونوں ممالک نے اپنے زیر قبضہ علاقوں میں فلسطینی ریاست نہیں بننے دی۔ اگر 1948ء میں مصر اور اُردن اپنے زیرِ قبضہ علاقوں میں فلسطینی ریاست بنادیتے تو مسجدِ اقصیٰ آج بھی مسلمانوں کے قبضے میں ہوتی اور فلسطینی کم ازکم آج کی نسبت بہتر زندگی بسر کررہے ہوتے۔ فلسطینیوں نے 2000ء کے کیمپ ڈیوڈ مذاکرات میں صدر کلنٹن کا پیش کردہ حل نہ مان کر غلطی کی۔ اس حل کے مطابق مغربی کنارے کا دوتہائی حصہ، آدھا یروشلم بشمول مسجد اقصیٰ اور پورا غزہ فلسطینی ریاست کا حصہ بن جانا تھا۔ 
یہ بات بالکل واضح ہے کہ موجودہ حالات میں اسرائیل کو فوجی شکست دینا ناممکن ہے۔ اس لیے یہ ضروری ہے کہ آج کے حالات کے مطابق ایک عملی سمجھوتہ کیا جائے تاکہ فلسطینی آزاد فضا میں سانس لے سکیں اور مسجد اقصیٰ آزاد ہوجائے۔ مستقبل میں کیا ہوتا ہے، اس کی خبر ہمیں نہیں۔ ممکن ہے امریکہ اور اسرائیل کا اتحاد کمزور پڑجائے، پھر نئے امکانات جنم لیں گے۔ لیکن آج تو ہمیں آج کا مسئلہ حل کرنا ہے۔ 
بدقسمتی سے فلسطینی قوم آزادی سے پہلے ہی پی ایل او اور حماس کے درمیان یوں تقسیم ہوکر رہ گئی ہے کہ دونوں نے ایک دوسرے کے سینکڑوں کارکنوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا ہے۔ غزہ کی پٹی پر حماس کا قبضہ ہے اور مغربی کنارے پر پی ایل او کا۔ 
فلسطین میں صرف اُسی وقت مسلمانوں اور فلسطینیوں کے حق میں کوئی حل نکل سکتا ہے جب فلسطینی اپنے اختلافات بھلا کر آزادی کے لیے متحد ہوجائیں اور اسرائیل کے خلاف متشددانہ کاروائیاں روک دیں، اس لیے کہ ان کاروائیوں سے اسرائیل کو نقصان نہیں پہنچ رہا اور الٹا فلسطینی بدنام ہورہے ہیں۔اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے فلسطین میں نئے آزادانہ انتخابات اور اس کے مطابق حکومت سازی لازم ہے۔ یہ بھی ضروری ہے کہ فلسطینی خالصتاً عدمِ تشدد کی بنیاد پر پرامن طریقے سے مظلومانہ جمہوری جدوجہد شروع کردیں۔ اس طرح مغرب کے اندربھی فلسطین کے حقوق کے لیے آوازیں اٹھنا شروع ہوجائیں گی۔ یوں فلسطین کے لیے آزادی کا مرحلہ قریب تر آجائے گا اور ساری دنیا کے مسلمان بلاروک ٹوک مسجد اقصیٰ جاسکیں گے۔ 


مسئلہ کشمیر 

دنیا کی پوری تاریخ یہ شہادت دیتی ہے کہ کوئی قوم اپنے مطالبات میں صرف اُس وقت کامیاب ہوسکتی ہے جب وہ ایک متحد قیادت کے جھنڈے تلے جدوجہد کرے۔ اس کے برعکس کشمیر کا معاملہ یہ ہے کہ یہاں تیس کے لگ بھگ سیاسی تنظیمیں قائم ہیں جن کے درمیان نظریاتی اختلافات موجود ہیں لیکن اصل جھگڑا قیادت کا ہے۔ اسی طرح وہاں بیس سے زیادہ مسلح مزاحمتی تنظیمیں موجود ہیں۔ ان میں سے اکثر تنظیمیں فرقہ وارانہ بنیاد پر قائم ہیں۔ ایسی صورت حال میں آزادی تو کیا، محض کچھ حقوق حاصل کرنے کا خواب بھی نہیں دیکھا جاسکتا۔ 
اس ضمن میں دوسری حقیقت یہ ہے کہ بھارت ایک بہت بڑا ملک ہے جس سے جنگ کرکے کشمیر کو آزاد نہیں کرایا جاسکتا۔ اس معاملے میں پاکستان نے جتنی جنگیں لڑیں، اُن کا پاکستان کو بڑا نقصان پہنچا۔ اگست 1988ء میں مجاہد تنظیموں کی طرف سے بھارتی افواج کے خلاف مسلح آپریشن شروع کردیا گیا۔ اس مسلح جدوجہد میں پچاس ہزار سے زیادہ کشمیری اپنی جان، جانِ آفرین کے سپرد کرچکے ہیں، تاہم ہم دیکھتے ہیں کہ اس بیس سالہ لڑائی کا بھی کشمیری مسلمانوں کے حق میں کوئی مثبت نتیجہ نہیں نکلا۔ اس کے برعکس بھارت کا رویہ سخت سے سخت تر ہوتا چلا گیا۔ 
تیسری حقیقت یہ ہے کہ بھارت بہرحال ایک جمہوری ملک ہے، جہاں جمہوریت سے فائدہ اٹھاکر مقبوضہ کشمیر کے مسلمان حالات کو اپنے حق میں کرسکتے ہیں۔ وہ چاہیں تو پرامن جدوجہد کے ذریعے مکمل صوبائی خودمختاری کے لیے آواز بلند کرکے پوری دنیا بلکہ بھارت کی رائے عامہ کو بھی اپنے حق میں ہموار کرسکتے ہیں۔ اس طرح وہ محض نقشے پر بھارت کے اندر ہوں گے مگر عملاً آزاد زندگی بسر کریں گے۔ 
چوتھی حقیقت یہ ہے کہ مقبوضہ کشمیر کو چھوڑ کر باقی بھارت کے اندر بھی 15کروڑ سے زیادہ مسلمان بستے ہیں۔ ان مسلمانوں کے حقوق کی پاسداری ہمارا فرض ہے کیونکہ انہی کے آباؤجدادکی جدوجہد کی قیمت پر ہمیں پاکستان ملا تھا۔ اگر مقبوضہ کشمیر بھارت سے علیحدہ ہوتا ہے تو بھارتی مسلمانوں کے خلاف ہندوؤں کے غیض وغضب میں بہت اضافہ ہوجائے گا۔ اور اگر مقبوضہ کشمیرآخری حد تک ممکن اندرونی خودمختاری کے ساتھ بھارت کا حصہ رہتا ہے تو یہ پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک پُل کا کردار ادا کرے گا، اور بھارتی مسلمانوں کو بہت آسانیاں مل جائیں گی۔ 
پانچویں حقیقت یہ ہے کہ مسئلہ کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی قراردادوں کی اب کوئی حیثیت نہیں رہ گئی۔ یہ قراردادیں جنوری 1948ء سے لے کر دسمبر1957ء کے درمیان میں منظور کی گئیں تھیں۔ ان میں کئی قراردادیں نظری طور پر تو پاکستان کے حق میں ہیں لیکن عملاً اُن سے بھارت کو فائدہ پہنچتا ہے۔ یہ تمام قراردادیں اقوام متحدہ کے چارٹر کے شیڈول سات سے تعلق رکھتی ہیں جس کا مطلب یہ ہے کہ ان کی نوعیت اصل میں سفارشی ہے اور ان پر عمل درآمد لازمی نہیں ہے۔ فریقین میں سے کوئی بھی اسے ماننے سے انکار کرسکتا ہے۔ 
چھٹی حقیقت یہ ہے کہ اس وقت یہ بات بڑی طاقتوں کے مفاد میں ہے کہ بھارت اور پاکستان میں کوئی سمجھوتہ ہوجائے کیونکہ اب یہ دونوں طاقتیں ایٹمی صلاحیت کی حامل بن گئیں ہیں اور اگر دونوں کے درمیان اس مسئلے پر جنگ چھڑ جائے تو اس کے بہت خوف ناک نتائج نکل سکتے ہیں۔ تاہم بین الاقوامی طاقتوں میں سے کوئی بھی اس پوزیشن میں نہیں کہ وہ ان دونوں ملکوں پر کوئی حل مسلط کرسکے۔ 
ساتویں حقیقت یہ ہے کہ بھارت پورے کشمیر یا اُس کے کسی حصے کی اپنی ریاست سے کامل علیحدگی کو کبھی قبول نہیں کرے گا۔ ایسا فیصلہ صرف وہ ملک کرتا ہے جو تباہی کی آخری حد پر ہو۔ ہم جانتے ہیں کہ بھارت کو ایسی کوئی صورت حال درپیش نہیں ہے۔ جب کہ اس کے برعکس پاکستان کو بہت سے حقیقی خطرات کا سامنا ہے۔
آٹھویں حقیقت یہ ہے کہ مسئلہ کشمیر نے پاکستان کو بہت سے زیادہ نقصان پہنچایا ہے، اور اگر یہ مسئلہ جاری رہا تو یہ نقصان بڑھتا ہی چلا جائے گا۔ مسئلہ کشمیر نے بھارت کو بھی نقصان پہنچایا ہے لیکن ایک بڑا ملک ہونے کی وجہ سے وہ ان نقصانات کو برداشت کرنے میں کامیاب رہا ہے۔ 
چنانچہ درج بالا حقائق کی موجودگی میں ہمارا نقطہ نظر یہ ہے کہ پاکستان کو بھارت کے ساتھ ایسے حل پر بات چیت کرنی چاہیے جس کے ذریعے بھارتی کشمیر اور پاکستانی کشمیر دونوں کو آخری ممکن حد تک اندرونی خودمختاری مل جائے اور ان دونوں خطوں کے درمیان ویزے اور پاسپورٹ کی شرائط کو ختم کردیا جائے۔ ایسے کسی حل کو بڑی طاقتوں اور اقوام متحدہ کی ضمانت حاصل ہونی چاہیے۔ جب تک ایسے کسی حل پر اتفاق رائے نہ ہو، تب تک پاکستان کو خالصتاً پُرامن طریقے سے اپنی کوششیں جاری رکھنی چاہیے اور اس ضمن میں ہر طرح کی عسکریت پسندی کو خیرباد کہنا چاہیے۔ 


’’دہشت گردی کے خلاف جنگ‘‘ 

اس راقم کے نزدیک دہشت گردی کی تعریف یہ ہے کہ ’’ہر وہ مسلح عمل دہشت گردی ہے جس میں دہشت پیدا کرکے اپنے مقاصد کی حصول کے کوشش کی جائے اور اس عمل میں ایسے اقدامات اٹھائے جائیں جن کی وجہ سے براہ راست یا جس کے نتیجے کے طور پر جنگ میں غیر شریک افراد کے جان ومال کو نقصان پہنچے‘‘۔ 
تاریخ کے ہر دور میں یہ دہشت گردی موجود تھی اور ہے۔ اس میں مسلم اور غیر مسلم کی کوئی تمیز نہیں تھی۔ یورپی ریاستوں نے صلیبی جنگوں میں مسلمانوں اور یہودیوں کے خلاف بدترین دہشت گردی کا ارتکاب کیا۔ مسلمانوں کی تاریخ میں امیر تیمور اور نادر شاہ جیسے بادشاہ گزرے ہیں جنہوں نے لاکھوں عام افراد کا قتل عام کرکے دہشت گردی کی ارتکاب کیا۔ سپین میں لاکھوں مسلمانوں کو قتل کرکے اُس وقت کے عیسائی حکمرانوں نے خوف ودہشت کا بازار گرم کیا۔ قرونِ وسطیٰ کے یورپ میں پوپ اور دوسرے مذہبی رہنماوؤں نے سائنسی اور جمہوری ذہنیت رکھنے والے لوگوں کا قتلِ عام کرکے دہشت گردی کی۔ پہلی اور دوسری جنگ عظیم کو شروع کرکے جرمنی، اٹلی اور جاپان نے دہشت گردی کی، جس کے نتیجے میں کروڑوں افراد موت کے گھاٹ اتر گئے۔ دوسری جنگ عظیم میں ہیروشیمااور ناگاساکی نامی شہروں پر ایٹم بم پھینک کر امریکہ نے دہشت گردی کا ارتکاب کیا۔ اسی طرح ویت نام پر امریکی حملہ، ہنگری پر روسی حملہ، انیس سوستر میں پاکستانی فوج کی مشرقی پاکستان میں کاروائیاں، ایران اور کویت پر عراق کا حملہ، افغانستان میں روسی مداخلت، ورلڈ ٹریڈسنٹر پر خودکش حملہ، افغانستان پر امریکی بمباری، عراق پر امریکی حملہ، اور سرزمینِ فلسطین میں یہودیوں کی فلسطینیوں کے خلاف کاروائیاں، یہ سب دہشت گردی کے واقعات ہیں۔اسی طرح سارے کے سارے خودکش حملے بھی دہشت گردی کی ایک قسم ہیں۔ 
اُمتِ مسلمہ کے زیادہ تر مسائل چاروجوہات سے پیدا ہوئے۔ ایک افغانستان میں روسی افواج کی مداخلت اور پاکستان کی طرف سے اُس کے مقابلے کے لیے ایک مخصوص اور غلط سٹریٹیجی۔ دوسرا نائن الیون کا واقعہ۔تیسراعراق میں امریکی مداخلت۔چوتھا القاعدہ کی حکمت عملی۔القاعدہ کی طرف یہ حکمت عملی تیار کی گئی کہ ہر جگہ میں ہر ممکن حد تک امریکی اور یورپی مفادات پر حملے کئے جائیں۔ یہ حملے فوجی اور سویلین دونوں مقامات پر کئے جارہے ہیں۔ القاعدہ جن مسلمان ملکوں کو امریکہ کا اتحادی سمجھتی ہے، اُن کے خلاف بھی حملے کئے جارہے ہیں۔ ان حملوں میں بھی فوجی اور سویلین دونوں کو ٹارگٹ کیا جا رہا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ امریکہ جارحانہ اقدامات کررہا ہے کیونکہ کسی بھی سپر پاور کے اقدامات طاقت کی نفسیات کے تحت طے ہوتے ہیں۔ اگرچہ القاعدہ کی ان سرگرمیوں سے امریکہ اور مغرب کو کچھ نہ کچھ نقصان پہنچا ہے لیکن اس حکمتِ عملی کا اصل نقصان پوری امتِ مسلمہ کو پہنچ رہا ہے۔ اس کی وجہ سے بڑی تعداد میں بے گناہ لوگوں کے جان ومال کا نقصان ہورہا ہے، عالمِ اسلام کے اندر ہر جگہ فساد اور انارکی نے جنم لیا ہے، مغرب میں مسلمانوں اور اسلام کے خلاف نفرت بہت بڑھ گئی ہے اور القاعدہ کی اِن سرگرمیوں کی وجہ سے امریکہ کو مزید فوجی مداخلت اور بمباری کا جواز مل رہا ہے۔ 
یہ حکمتِ عملی امتِ مسلمہ کے لیے ہر اعتبار سے نقصان دہ ہے۔ اس کے بجائے ہماری حکمت عملی یہ ہونی چاہیے کہ ہم پُرامن راستہ اختیار کریں، امریکہ کو مزید مداخلت کا جواز فراہم نہ کریں، اور جہاں جہاں امریکی مداخلت موجود ہے وہاں پُرامن طریقے سے اس مداخلت کو ختم کرنے کی کوشش کریں۔ 
یہ بات واضح ہے کہ امریکہ کو نصیحتیں کرنے اور سمجھانے کا کوئی فائدہ نہیں۔ سپر پاور ہمیشہ اپنی اندرونی حرکیات (Dyanamics) کے تحت کام کرتی ہے۔ ہمارا اصل کام یہ ہونا چاہیے کہ ہم یک طرفہ طور پر ایسے اقدامات اٹھائیں جن کے ذریعے ہمیں اُمت مسلمہ کی تعمیر کا موقعہ مل سکے۔ 


اُمت مسلمہ کی دو اہم ترین خرابیاں 

اُمت مسلمہ کے اندر سرمایہ داروں اور حکمرانوں کا ایک طبقہ ایسا ہے جس کو اپنے قومی مفادات کا کوئی خیال نہیں۔ اس طبقے کے پاس اربوں ڈالر موجود ہیں مگر یہ صرف عیاشی کے کام آرہے ہیں۔ اور اس خرابی کو دور کرنے کا واحد حل یہ ہے کہ امتِ مسلمہ میں شعور پیدا کیا جائے اور ایک ذہنی تبدیلی لائی جائے۔ اگرچہ اس ذریعے سے تبدیلی دیر سے آتی ہے مگر دیرپا ہوتی ہے۔ اس کا حل خونی انقلاب نہیں ہے، اس لیے کہ ایسے انقلاب سے مزید نقصان ہوتا ہے۔ 
اُمت مسلمہ کا دوسرا مسئلہ یہ ہے کہ اس امت سے محبت کرنے والے اور اس کا درد اپنے سینے میں رکھنے والے لوگ زیادہ تر جذباتی روئے کا شکار ہیں۔ یہ طبقہ چاہتا ہے کہ فوری تبدیلی آجائے اور مدِمقابل طاقتوں کو شکستِ فاش سے دوچار کردیاجائے۔ اس روئے کے اثر کے تحت یہ طبقہ عسکریت پسندی اور خفیہ تنظیموں کا راستہ اپنا لیتا ہے۔ امتِ مسلمہ کی پوری تاریخ اس بات کی شاہد ہے کہ ایسے عاجلانہ اقدامات نے ہمیشہ ہمیں نقصان پہنچایا ہے۔ ہمیں شعوری طور پر ان دونوں رویوں سے بچنا ہوگا۔ یہ ہماری ضرورت ہے کہ ہم مقابل طاقتوں سے امن کا وقفہ خرید لیں۔ ترقی کرنے کے لیے امن انتہائی ضروری ہے۔ امن کا وقفہ خریدنے سے مراد یہ ہے کہ ہر فرد، ہر گروہ اور ہر مسلمان ملک پرامن راستے پر گامزن ہوجائے۔ ہم یہ یک طرفہ فیصلہ کرلیں کہ ہم تنازعات کے حل میں اپنی طرف سے طاقت استعمال نہیں کریں گے، ہم مکالمے کے ذریعے سے سمجھوتے کی طرف پیش رفت کی کوشش کریں گے۔ کسی بھی سمجھوتے کے لیے ہم ’’منصفانہ‘‘ کی شرط عائد نہیں کریں گے، بلکہ کچھ لو اور کچھ دوکی بنیاد پر عملی حل کی طرف بڑھیں گے۔ جب تک سمجھوتہ نہیں ہوتا تب بھی کسی بھی حالت میں مسلح کاروائی کی طرف قدم نہیں اٹھائیں گے۔ اس نکتے کی بنیاد یہ ہے کہ اس وقت ہم کمزور اور ہماری مقابل قوتیں توانا اور مضبوط ہیں۔ قبل از وقت میدان جنگ میں کود پڑنا خود اپنے ہاتھوں سے ایک اور شکست کو تحریر کرنا ہے۔ نیز یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ مسلمانوں کو درپیش زیادہ تر مسئلوں کا ممکن پُرامن عملی حل موجود ہے۔ 
مسلمان ممالک کو ایک دفعہ امن کا وقفہ میسر آجائے تو وہ اگلے پچاس برس کے اندر اندر ترقی یافتہ ممالک کے ہم پلہ بن سکتے ہیں، اپنے معاشروں کی تعمیر کرسکتے ہیں اور خوشحالی کی نئی منزلوں کی طرف پیش قدمی کرسکتے ہیں۔ یہ ایک ایسی حکمت عملی ہے جس پر دنیا کی ہر ہوش مند قوم عمل کرتی ہیں۔ 


امت مسلمہ کے لیے فوری ایجنڈا 

پچھلے صفحات میں کیے گئے تجزئے کے مطابق امت مسلمہ کی نشاطِ ثانیہ یعنی ایک نئی باوقار زندگی کے لیے درج ذیل چار باتوں پر عمل انتہائی ضروری ہے۔ 
O سائنس اور ٹیکنالوجی پر دسترس۔ کیونکہ اس کے بغیر دنیا میں عزت ووقار کے ساتھ جینے کا خواب دیکھنا فضول ہے۔ سائنس پر صرف وہی قوم دسترس حاصل کرسکتی ہے جو یہ تہیہ کرلے کہ اُسے اپنے سب بچوں کو پہلے بارہ برس مفت اور لازمی تعلیم دینی ہے۔ 
O جمہوری کلچر، جس کا مطلب یہ ہے کہ سب مسلم ممالک اپنے ہاں کامل جمہوری کلچر کو بطورِ اصول وقدر اختیار کرلیں۔ درحقیقت جمہوریت ہی امتِ مسلمہ کے اتحاد کی منزل کی طرف جانے والی پہلی سیڑھی ہے۔ مسلم ممالک صرف اُس وقت ایک دوسرے کے قریب آسکتے ہیں اور اُن کا تعاون عملی حقیقت میں بدل سکتا ہے جب ان سب کے ہاں جمہوری کلچر وجود میں آجائے۔ 
Oانصاف کی فراہمی، جس کا مطلب یہ ہے کہ لوگوں کو عدالتوں سے جلد اور سستا انصاف ملے، قانون کے سامنے سب شہری برابر ہوں، حکمران اور ایک عام انسان کے لیے ایک ہی قانون ہو، ہر معاملہ شفاف ہو اور حکمرانوں اور بالادست طبقات کے لیے احتساب کا نظام موجود ہو۔ 
Oحکمت وصبر، جس کا مطلب یہ ہے کہ ہر مسئلے پر ٹھنڈے دل ودماغ کے ساتھ بالکل معروضی (Objective)طریقے سے غوروفکر کیا جائے اور اُس کا پرامن حل تلاش کیا جائے۔ جذباتی نعرے نہ لگائے جائے، جذباتی تقریریں نہ کی جائیں، مقابل طاقتوں کو بلا ضرورت نہ للکارا جائے اور بغیر سوچے سمجھے اقدامات نہ اٹھائے جائیں۔ ہر مثبت بات کی جائے اور منفی بات سے پرہیز کیا جائے۔ ہر احتجاج اور ردِعمل قانون اور اخلاقیات کے اندر ہو۔ دراصل جذباتی اور بلند بانگ نعرے اور دعوے ایک انتہا پسندانہ ردِعمل کی ذہنیت کو جنم دیتے ہیں جس میں انسان بے سوچے سمجھے مرنے مارنے پر اتر آتا ہے۔ اسی کیفیت میں کئے گئے سب جذباتی فیصلے نیم پختہ اور غلط ہوتے ہیں جس کا نتیجہ خود ہمارے لیے زہرِ قاتل ہوتا ہے۔ پچھلے تین سو برس سے ہم سے ایسے ہی غلط فیصلے سرزد ہورہے ہیں۔ اب اس ذہنیت سے نجات ہمارے مستقبل کی کامیابی کے لیے ایک اہم شرط ہے۔   

پاکستان کے لیے فوری ایجنڈا 

درج بالا چاروں امور کی طرف عملی پیش رفت ہر ملک کی طرح پاکستان کی بھی اہم ضرورت ہے۔ تاہم پاکستان کے لیے دو مزید باتوں کی طرف توجہ انتہائی ضروری ہے۔ ایک افغانستان اور کشمیر کے تنازعے کے حقیقت پسندانہ اور پرامن حل کی طرف پیش رفت۔ ان دونوں تنازعات کا پرامن حل موجود ہے جن پرہم پچھلے صفحات میں روشنی ڈال چکے ہیں۔ دوسرا نکتہ مکمل صوبائی خودمختاری ہے۔ صوبائی خودمختاری کا اصل مطلب مالیاتی خودمختاری ہے۔ اس سے مراد یہ ہے کہ اصلاً ہر صوبہ اپنے وسائل کا خودمالک ہو اور مرکز ہرصوبے کے تناسب سے اپنے حصے کی رقم لے۔ مرکز کے پاس دفاع، امورِ خارجہ اور بین الصوبائی رابطے کی وزارت ہونی چاہیے۔ اس کے علاوہ جن چیزوں میں صوبوں کے درمیان مشترک مفاد ہو، مثلاً مواصلات، تعلیم، صحت اور اسی طرح کے دوسرے مسائل، اُن کو صوبائی رابطے کی وزارت کے ذریعے اتفاق رائے سے حل کیاجائے۔ اسی طرح صوبے آپس میں خود ہی اپنے اپنے مفادات کا خیال رکھتے ہوئے دوسرے صوبوں کو رعایتیں دیں گے۔ صوبائی خودمختاری پاکستان کی اہم ترین ضرورتوں میں سے ایک ہے۔ صرف اسی طریقے سے قومی یکجہتی پیدا کی جاسکتی ہے۔ 


ہر مسلمان اور پاکستانی کے لیے انفرادی ایجنڈا 

ہم میں سے ہر ایک فرد کا یہ کام تو لازماً ہونا چاہیے کہ ہم درجِ بالا سب امور کے لیے لوگوں کے اندر اور خصوصاً بالادست طبقے کے اندر احساس وشعور پیدا کریں۔ لیکن اس کے علاوہ ہرفرد کی دو مزید ذمہ داریاں بن جاتی ہیں۔ اگر ان ذمہ داریوں کو انفرادی سطح پر پورا کرلیا جائے تو ان کے بہت بڑے اجتماعی نتائج نکلیں گے۔ ان میں سے پہلی چیز غربت کے خلاف جدوجہد ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ہر فرد معاشرے میں پھیلی غربت کے خاتمے لیے کچھ عملی اقدم کرے۔ ہمارے ہاں ہر طرف غربت اور محرومی پھیلی ہوئی ہے۔ ہزاروں بچے بوٹ پالش کرتے ہیں، بھیک مانگتے ہیں اور بالکل چھوٹی عمر میں مکینکوں کے ساتھ بیٹھ کر کام کرتے ہیں۔ ہمارے اردگرد کتنی ہی بیوائیں، بوڑھے اور یتیم ہیں جن کا کوئی سہارا نہیں۔ کتنے بیمار ہیں جن کے پاس داوؤں کے پیسے نہیں۔ ہماری گلیاں گندگی سے اَٹی پڑی ہیں، حتیٰ کہ ہمارے مساجد میں بھی بسا اوقات صفائی کا مناسب انتظام نہیں ہوتا۔ ان سب چیزوں میں ہر ایک کو آگے بڑھ کر خود اپنے ہاتھوں اور اپنے وسائل سے عملی کام کرنا چاہیے۔ دوسری بات جہالت کے خلاف جدوجہد ہے۔ ہمارے گردوپیش میں ہزاروں بچے تعلیم کے زیور سے محروم ہیں۔ بہت سے طلبہ کے پاس امتحان میں بیٹھنے کی فیس نہیں ہوتی۔ چنانچہ ہم سے ہر ایک کی یہ انفرادی کوشش ہونی چاہیے کہ ہمارے گردوپیش میں ہر بچہ بارہ برس کی تعلیم حاصل کرے ۔اس معاملے میں ہم ذاتی طور پر خود آگے بڑھ کر عملی مدد کریں۔ جہالت کے خلاف جدوجہد کا یہ بھی مطلب ہے کہ ہم قرآن وسنت کی تعلیمات کوزیادہ سے زیادہ سمجھیں،قرآن وحدیث کی اصل تعلیمات اور فقہ کے درمیان فرق کو سمجھیں اور فرقہ وارانہ تعصب کو کم سے کم کرنے کی کوشش کریں۔ یہ سب کام ذاتی طور پر ہمارے کرنے کے ہیں۔ 
ہر فرد کو اپنے آپ سے یہ پوچھنا چاہیے کہ وہ ان دونوں کاموں یعنی غربت کے خلاف جدوجہد اور جہالت کے خلاف جدوجہد میں کیا کردار ادا کررہا ہے۔