ایک تھا لڑکا موٹا ، لدّھڑ        نام تھا اُس کا لال بجھکّڑ
پڑھنا لکھنا پاس نہ پھٹکے        کچھ پوچھو تو ایک بھلکّڑ
آنا جانا گھر میں اُس کا        جیسے آندھی ، جیسے جھکّڑ
یہ دروازہ ، وہ دروازہ        پِیٹ رہا ہے سب کو دھڑ دھڑ
گھر میں ہو تو ہر کونے میں        کھٹ کھٹ، کھٹ کھٹ، کھڑ کھڑ، کھڑ کھڑ
مٹکا توڑے ، چھاگل اُ لٹے        سارے میں کر ڈالے کیچڑ
گھر سے نکلے ، باہر جائے        پڑ جاتی ہے ہر سُو بھاگڑ
ہر کوچے میں بھاگ رہا ہے        بانس پہ اپنے باندھے جھانکڑ
بات کرو تو مُنہ پر گالی        ایسا لاغی ، ایسا پھکّڑ
ہم نے اُس کی ماں سے پوچھا        آپ نے دیکھا اِس کا ہلّڑ
اٹھ کر بیٹھی ناز سے بولی        اے لو ، اُس کا الّڑ بلّڑ
اِس کو تم ہلّڑ کہتے ہو        گویا اک تتلی کو مکّڑ
ماؤں کی یہ بات ہے بچو
جس سے پھر ہوتی ہے گڑبڑ

______